Book Name:Wasail e Bakhshish

 

غم کے مارو! بے سہارو! بس تمہاری عید ہے

ہو گیا راحت کا ساماں   عیدِمیلادُالنَّبی

بیقرارو! دلفِگارو! بس تمہاری عید ہے

کیوں   ہو حیران و پریشاں   عیدِمیلادُالنَّبی

غم نصیبو! اب غموں   کا دُور اندھیرا ہوگیا

تم مناؤ خوب خوشیاں   عیدِمیلادُالنَّبی

کِھل اُٹھے مُرجھائے دل اور جان میں   جان آگئی

آگئے ہیں   جانِ جاناں   عیدِمیلادُالنَّبی

بے کسوں   کے دن پھرے اور غم کے مارے ہنس پڑے

ہو گیا خوشیوں   کا ساماں   عیدِمیلادُالنَّبی

اِنْ شَآءَ اللہ آج ’’عیدی‘‘ میں   ملے گی مغفِرت

ہے جبھی شیطاں   پریشاں   عیدِمیلادُالنَّبی

یانبی! اپنی وِلادت کی خوشی میں   اپنا غم

دیجئے طیبہ کے سلطاں   عیدِمیلادُالنَّبی

عیدِ میلادُالنَّبی کا واسِطہ عطّارؔ کو

بخش دے اے ربِّ رَحماں   عیدِمیلادُالنَّبی

 

دل سے مِرے دنیا کی مَحَبَّت نہیں   جا تی

دل سے مِرے دنیا کی محبت نہیں   جاتی

سرکار! گناہوں   کی بھی عادت نہیں   جاتی

دن رات مسلسل ہے گناہوں   کا تَسَلسُل

کچھ تم ہی کرو نا یہ نُحُوست نہیں   جاتی

کھا نے کی زِیادَت ہے تو سونے کی بھی کثرت

اور خندۂ بے جا([1])کی بھی خصلت نہیں   جاتی

گو پیشِ نظر قبر کا پُرھول گڑھا ہے

 



[1]     فضول ہنسی   



Total Pages: 406

Go To