Book Name:Wasail e Bakhshish

 

حاجیوں   کے بن رہے ہیں   قافِلے پھر یانبی

حاجیوں   کے بن رہے ہیں   قافِلے پھر یانبی

پھر نَظر میں   پِھر گئے حج کے مَنَاظِر یانبی!

کررہے ہیں   جانے والے حج کی اب تیّاریاں 

رہ نہ جاؤں   میں   کہیں   کردو کرم پھر یانبی!

آہ! پلّے زَر نہیں   رَخْتِ سفر سَروَر نہیں 

تُم بُلالو تُم بُلانے پر ہو قادِر یانبی!

کِس قَدَر تھا خوش مجھے جب پیش آیا تھا سفر

مُجھ کو اَب کی بار بھی بُلوائیے پِھر یانبی!

دِل مِرا غمگین ہے اور جَان بھی ہے مُضْطَرِب

مرشدی کا واسطہ بُلوائیے پھر یانبی!

غم کے بادَل چَھارہے ہیں   آہ! میرے قَلب پر

حَاضِری کی دو اِجازت مُجھ کو تُم پھر یانبی!

گُنبدِ خَضرا کے جَلْوے دیکھنے کب آؤں   گا

کب تک اَب تڑپاؤ گے تُم مُجھ کو آخِر یانبی!

 

آپ ہی اسباب آقا پِھر مُہَیّا کیجئے

پھر دِکھا دیجے مدینے کے مَنَاظِر یانبی!

کِس طرح تَسکین دُوں   گا میں   دِلِ غمگین کو

رَہ گیا گَر حَاضِری سے میں   جو قاصِر یانبی!

مُجھ پہ کیا گُزرے گی آقا! اِس برس گَر رَہ گیا

میرا حالِ دِل تو ہے سب تُم پہ ظاہِر یانبی!

آہ! طیبہ سے اگر  میں    دُور  رہ  کر   مَر گیا

رُوح بھی رَنْجُور ہوگی کِس قَدَر پھر یانبی!

مِثلِ سَابِق اِس بَرس بھی کیجئے نَظرِ کرم

میں   گُزَشْتہ سال آیا تھا بِالآخِر یانبی!

 



Total Pages: 406

Go To