Book Name:Wasail e Bakhshish

پھر دکھا دو مجھے اِک بار رسولِ عَرَبی                                   تم مدینے کا وہ گلزار رَسُولِ عَرَبی

سامنے ہوں   ترے مینار رسُولِ عَرَبی                                   گنبدِ سبز کے انوار رسُولِ عَرَبی

تیرا صَحرا، ترا کُہسار رَسُولِ عَرَبی                                      اور ہو یہ ترا بدکار رَسُولِ عَرَبی

تیری دیوار کو چُوموں   تِرا دروازہ بھی                                 دُھول بھی پھول بھی اور خَار رسُولِ عَرَبی

جُوں  ہی روتاہواآؤں  میں  تِرے روضے پر                           کاش! اُسی آن ہو دیدار رسُولِ عَرَبی

کوئی خالی نہیں   لوٹا کبھی دَر سے آقا                                    ہے سخی آپ کا دَربار رَسولِ عَرَبی

کوئی دولت، کوئی ثَروَت([1])  کوئی شُہرت چاہے                       میں   فقط تیرا طلب گار رَسُولِ عَرَبی

آتَشِ عشق بھڑکتی ہی رہے سینے میں                                    بس تڑپتا رہوں   سَرکار! رَسُولِ عَرَبی

آپ کے ہجر([2]) کا غم کاش رُلائے مجھ کو                             خون روتا رہوں   سرکار! رَسُولِ عَرَبی

ہو ’’مدینہ ہی مدینہ‘‘مرے لَب پر اے کاش                        ہر گھڑی ہو یِہی تکرار رَسُولِ عَرَبی

مُجھ کو دیوانہ بنا لو شہِ والا اپنا                                             میرے سرور مرے سردار رَسُولِ عَرَبی

 

تیرے دربارِ گُہَربار کے سَب سائل ہیں                             اَغنِیا([3]) ہوں   کہ ہوں    نادار  رَسُولِ  عَرَبی

تیرے دیوانے تڑپتے ہیں   مدینے کیلئے                               وہ بھی دیکھیں   تِرا دربار رَسُولِ عَرَبی

دُور سُنّت سے مسلمان ہوئے جاتے ہیں                             آہ! فیشن کی ہے یَلغار([4]) رَسُولِ عَرَبی

سُنّتوں   کا ہو عَطا دَرد مسلمانوں   کو                                     دُور فیشن کی ہو بھرمار رَسُولِ عَرَبی

میرا سینہ تِری سُنّت کا مدینہ بن جائے                                سُنّتوں   کا کروں   پَرچار رَسُولِ عَرَبی

جَامِ دیدار پِلا دو مِرے آقا! اب تو                                   آنکھ ہے کب سے طلبگار رَسُولِ عَرَبی

مُشکلیں   میری ہوں   آسان برائے مُرشِد                           میرے حامی، مرے غمخوار رَسُولِ عَرَبی

واسِطہ غوث و رضا کا سَرِ بالیں ([5]) آجا                                 جَاں   بَلَب([6]) ہے تِرا بیمار رَسُولِ عَرَبی

مُسکراتے ہوئے عُشّاق چلے دُنیا سے                                 قَبر میں   ہوگا جو دِیدار رَسُولِ عَرَبی

حُبِّ دُنیا میں   گَرِفتار ہے نفسِ ظالِم                                    اَلمَدد یَاشہِ ابرار! رَسُولِ عَرَبی

دِل پہ شیطان نے آقا ہے جمایا قبضہ                                  ہُوں   گناہوں   میں   گَرِفتار رَسُولِ عَرَبی

آہ! بڑھتا ہی چلا جاتا ہے مَرضِ عِصیاں                              دو شِفا سَیِّدِ اَبرار رَسُولِ عَرَبی

میں  گنہگار، سیہ کار و خَطا کار سہی                                       پَر ہُوں   کِس کا؟ تِرا سرکار رَسُولِ عَرَبی

میری ہر خصلتِ بَد دُور ہو جَانِ عَالَم!                                نیک بن جاؤں   میں   سرکار، رَسُولِ عَرَبی

گَرمیِ حَشر سے بے تَاب ہوں   شاہِ کوثر                               ہو نظر سُوئے گنہگار رَسُولِ عَرَبی

اَب تو سَرکار! ہو عطارؔ پہ نظرِ رَحمت                                  کہہ دو اپنا سگِ دَربار رَسُولِ عَرَبی

 



[1]     مالداری

[2]     جُدائی

[3]     غنی کی جمع،غنی یعنی مالدار 

[4]     حملہ  

[5]     سرہانے

[6]     مرنے کے قریب



Total Pages: 406

Go To