Book Name:Wasail e Bakhshish

تُو لِکھ دے الٰہی! مقدّر میں   میرے        مدینے میں   مرنا مدینے میں   جینا

یہ تسلیم، عمدہ ہے خوشبوئے جنّت        مجھے کاش مل جائے اُن کا پسینہ

مریضِ مَحَبَّت کا دَم ہے لبوں   پر         سِرہانے اب آجاؤ شاہِ مدینہ

بقیعِ مُبارَک میں   دو گز زمیں   دو             خُدارا کرم تاجدارِ مدینہ

نہیں   روتے عُشاق دنیا کی خاطِر            رُلاتی ہے اُن کو تو یادِ مدینہ

نِگاہوں   میں   ہر دَم مدینہ بسا ہو             مجھے کاش مل جائے وہ چشمِ بِینا

تڑپتے ہیں   روتے ہیں   دیوانے تیرے     جہاں   میں   جَب آتا ہے حج کا مَہینا

ترستے ہیں   جو دیدِ طیبہ کی خاطِر            دِکھا دیجئے نا انہیں   بھی مدینہ

پِلا دو ہمیں   جَامِ دیدار سَاقی!               کرم تِشنہ کاموں   پہ شاہِ مدینہ

بِاذنِ الٰہی    تِری   سب   خُدائی                  ہے مَیخانہ تیرا تِرا جام و مِینا

تمہیں   اے مُبلّغ! ہماری دُعا ہے           کئے جَاؤ طے تم ترقی کا زِینہ

تڑپ اُٹّھے آقا کے دیوانے عطارؔ

مدینے کی جانِب چلا جب سفینہ

 

پھر مجھے آقا  مدینے میں   بُلایا شکریہ

پھر مجھے آقا مدینے میں   بُلایا شکریہ                          شکریہ پھر گنبدِ خضرا دکھایا شکریہ

جس جگہ آٹھوں   پَہَر انوار کی ہیں   بارِشیں                    ایسی نورانی فَضاؤں   میں   بلایا شکریہ

روضۂ انور کے زائر کے شہا تم ہو شفیع                       میری بخشِش کا بہانہ یوں   بنایا شکریہ

پھر طوافِ خانۂ کعبہ کا بخشا ہے شَرَف                      خوب آقا آبِ زم زم بھی پِلایا شکریہ

مجھ سے عاصی کو شَرَف حج کا عطا فرمادیا                     کِس زَباں   سے ہو ادا تیرا خدایا شکریہ

یاالٰہی! اپنے پیارے کی وِلادَت گاہ کا                       میٹھے مکّے میں   مجھے جَلوہ دکھایا شکریہ

بھیک لینے کیلئے یارب حبیبِ پاک کا                       آستانہ ہم غریبوں   کو دکھایا شکریہ

پھر مدینے کی حَسین و خوبصورت وادِیوں                    کا حَسین و دِلکُشا منظر دکھایا شکریہ

مسجِد نبوی کے محراب اور مِنبر کا شہا!                       دِلنواز و دِلرُبا جلوہ دکھایا شکریہ

منہ لگاتا تھا کہاں   دنیا میں   کوئی بھی مجھے                      ایسے ناکارہ نکمّے کو نبھایا شکریہ

 



Total Pages: 406

Go To