Book Name:Wasail e Bakhshish

جو دے روز دو ’’درسِ فیضانِ سنّت‘‘        میں   دیتا ہوں   اُس کو دعائے مدینہ

سفر جو کرے قافِلوں   میں   مسلسل            میں   دیتا ہوں   اُس کو دعائے مدینہ

جو پابند ہے اجتماعات کا بھی                      میں   دیتا ہوں   اُس کو دعائے مدینہ

جو نیکی کی دعوت کی دھومیں   مچائے           میں   دیتا ہوں   اُس کو دعائے مدینہ

زباں   پر جو ’’قفلِ مدینہ‘‘ لگائے               میں   دیتا ہوں   اُس کو دعائے مدینہ

جو آنکھوں   پہ قفلِ مدینہ لگائے                میں   دیتا ہوں   اُس کو دعائے مدینہ

جو دیوانے فُرقت میں   روتے ہیں   آقا           دکھا دو انہیں   اب فَضائے مدینہ

دے سوزِ جگر چشمِ تر قلبِ مُضطَر             مجھے یاالٰہی برائے مدینہ

یہ عطار مکّے سے زندہ سلامت

تڑپتا ہوا کاش آئے مدینہ

 

خُوشا جھومتا جارہا ہے سفینہ

خُوشا جھومتا جا رہا ہے سفینہ                   پہنچ جائیں   گے اِنْ شَآءَ اللہ مدینہ

اَب آیا کہ اَب آیا جَدّہ کا ساحِل               اَب آئے گا مکّہ چلیں   گے مدینہ

میں   مکّے میں   جَاکر کروں  گا طواف اور        نصیب آبِ زم زم مُجھے ہوگا پینا

خُدایا مدینہ نظر آئے جُوں   ہی                 تڑپ کر گِروں   دے دے ایسا قرینہ

نہ کیوں   میری قِسمت پہ رشک آئے مجھ کو    کہاں   وُہ مَدینہ کہاں   میں   کمینہ

رہے وِردِ لَب کاش! ہر دم الٰہی                مدینہ، مدینہ، مدینہ، مدینہ

نظر نُور کی نُورِ ربُّ الْعُلیٰ ہو                    مِرے دِل کا چمکا دو مَیلا نگینہ

کرم کیجے آقا  دبائیں    نہ  مجھ  کو                   کبھی نفس و شیطاں  اے شاہِ مدینہ

بچا لیجئے مُجھ کو فیشن سے آقا                    عطا کیجئے سنّتوں   کا خزینہ

پلا دو مُجھے سَاقِیا! جَام ایسا                        رہوں   مَست و بَیخود میں   شاہِ مدینہ

تِرے عشق میں   کاش!روتا رَہوں   میں          رہے تیری اُلفت سے معمُور سینہ

 

 



Total Pages: 406

Go To