Book Name:Wasail e Bakhshish

اے نُورِ خُدا نُور بَھری دِل پہ نَظر ہو                       ہو نُور سے پُرنُور یہ بے نُور نگینہ([1])

سرکار! تمنّا ہے یُونہی عُمر بَسر ہو                           مرنا تری الفت میں   تری یاد میں   جینا

غمگین تِرے غم میں   رہُوں   کاش ! ہمیشہ                  روتی رہیں   آنکھیں   تو سُلگتا رہے سینہ

ساقی! مُجھے جَام ایسا محبت کا پِلادو                            اُترے نہ نشہ اس کا کبھی شاہِ مدینہ

تُم خاکِ مدینہ مِرے لاشے پہ چھڑکنا                     پھر مَلنا کفن پر جو ملے اُن کا پسینہ

عطّارؔ طلبگار ہے بس نظرِ کرم کا

لِلّٰہکرم،     جانِ کرم،     بہرِ مدینہ

 

کروں   دم بدم میں   ثنائے مدینہ

(اَلحمدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّیہ کلام ۷ذوالحجۃِ الحرام ۱۴۱۶ھ کو مکۃُ المکرمہ زادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماًمیں   تحریر کرنے کی سعادت حاصل ہو ئی )

کروں   دم بدم میں   ثنائے مدینہ                لگاتا رہے دل صدائے مدینہ

خدا کی قسم! پیاری پیاری ہے جنَّت            مگر عاشِقوں   کو رُلائے مدینہ

جہاں   کے نظارے ہوں   آنکھوں   سے اَوجھل         نظر میں   مری بس سمائے مدینہ

کِھلا دے کلی میرے مُر جھائے دل کی              خدارا تُو آکر ہوائے مدینہ

جسے چاہیئے دونوں   عالم کی دولت              وہ کشکول لے کرکے آئے مدینہ

عِنایت سے اللّٰہ  کی رَحمتوں   کا                  شب و روز دریا بہائے مدینہ

پئے پیرومرشد تُو فرما دے روشن             مرا قلبِ تِیرہ ضیائے مدینہ

شَفاعت کی خیرات کا جو ہے طالب           برائے زیارت وہ آئے مدینہ

نہ دے یاالٰہی! مجھے تختِ شاہی                 بنا دے مجھے بس گدائے مدینہ

شب و روز جلوے ہیں   ماہِ عرب کے          نہ کیوں   رات دن جگمگائے مدینہ

تجھے واسِطہ غوث و احمد رضا کا                    عطا کر الٰہی قضائے مدینہ

بقیعِ مبارک میں   مدفن عطا ہو                   کرم کر خدایا برائے مدینہ

 

مِری خاک جس دم اُڑے یاالٰہی                اسے کاش اُڑائے ہوائے مدینہ

پڑوسی بنا مجھ کو جنّت میں   اُن کا                 خُدائے محمد برائے مدینہ

لگا فجر میں   بھائی گھر گھر پہ جا کر                  ذرا دل لگا کر ’’صدائے ([2])مدینہ‘‘

 



[1]     نگینہ یعنی قیمتی پتھر یہاں   اِس کا مُرادی معنٰی’’ دل ‘‘ ہے۔ان معنوں   پر ’’بے نور نگینہ‘‘ یعنی تاریک دل ۔

[2]     فجر کی نماز کے لئے جگانا دعوتِ اسلامی کے مدنی ماحول میں  ’’ صدائے مدینہ‘‘ لگانا کہلاتا ہے۔



Total Pages: 406

Go To