Book Name:Wasail e Bakhshish

جان قدموں   پہ قربان کرتا           الوداع آہ شاہِ مدینہ

سوزِ الفت سے جلتا رہوں   میں         عشق میں   تیرے گُھلتا رہوں   میں

 

چاہے دیوانہ سمجھے زمانہ                      الوداع آہ شاہِ مدینہ

میں   جہاں   بھی رہوں   میرے آقا           ہو نظر میں   مدینے کا جلوہ

التجا میری مقبول فرما                         الوداع آہ شاہِ مدینہ

کچھ نہ حُسنِ عمل کر سکا ہوں                   نَذر چند اشک میں   کر رہا ہوں

بس یِہی ہے مِرا کُل اَثاثہ                    الوداع آہ شاہِ مدینہ

آنکھ سے اب ہوا خون جاری ([1])             روح پر بھی ہوا رنج طاری

جلد عطارؔ کو پھر بلانا

الوداع آہ شاہِ مدینہ

 

 

 

 

 

شُمَاتَت کی تعریف

دوسروں کی تکلیفوں اورمصیبتوں پرخوشی کااظہارکرنےکوشُماتَت کہتےہیں۔

(الحدیقةالنديةشرح الطریقةالمحمدیة ، ۱/ ۶۳۱)

 

ہر دم ہو مِرا وِرد مدینہ ہی مدینہ

ہر دَم ہو مِرا وِرد مدینہ ہی مدینہ                           بن جائے مِرا دل تری الفت کا خزینہ

وہ لَمحہ وہ دِن اَور وہ آجَائے مہینا                          پھر کاش! تڑپتا ہُوا پہنچوں   میں   مدینہ

طیبہ میں   بُلا کر مُجھے سلطانِ مدینہ                          دیدار کی خاطِر ہو عَطا آنکھ بھی بِینا

سینہ ہو مدینہ تو مدینہ بنے سینہ                            اور یاد تری دل میں   رہے شاہِ مدینہ

آجَائے مُجھے کاش! شَہَنشاہِ مدینہ                         رَونے کا تڑپنے کا پَھڑکنے کا قَرینہ

عِصیاں   کے تَلاطُم([2])میں   پھنسا میرا سفینہ                  ڈوبا میں   سنبھالو! مُجھے سرکارِ مدینہ

 



[1]     ’’خون کے آنسو رونا‘‘ مُحاورہ ہے اِس کے معنیٰ ہیں  ’’ غم سے رونا۔‘‘۔

[2]     موجوں   کے تھپیڑے   ۔



Total Pages: 406

Go To