Book Name:Wasail e Bakhshish

آتے ہیں   مُقدَّر کے سِکندر تِرے دَر پر                    بے اِذْن ہو کیسے کوئی مہمانِ مدینہ

آگ ایسی لگا دیجئے قلب اور جگر میں                        روتا رہوں   تڑپا کروں   اے جانِ مدینہ

گلزار یہاں   کے اِسے اچّھے نہیں   لگتے                       آنکھوں   میں   سمائے ہیں   بیابانِ ([1])مدینہ

اب سندھ کے جنگل میں   مِرا جی نہیں   لگتا                   بس مجھ کو بُلا لیجے گلستانِ مدینہ

دُنیاکے نظارے ہمیں   اِک آنکھ نہ بھائیں                    نظروں   میں   بسیں   کاش! بیابانِ مدینہ

لندن کوئی جاپان چلا مال کمانے                            دیوانہ چلا سُوئے بِیابانِ مدینہ

دُنیا کا کوئی شَہر ہو کس طرح مُمَاثِل([2])؟                    جب خُلدِ بَریں   بھی نہیں   ہم شانِ مدینہ

کردیجئے دیدار سے آنکھیں   مری ٹھنڈی                  اے جانِ جہاں   سَیِّد و سلطانِ مدینہ

اے کاش! مُبلّغ میں   بنوں   دینِ مُبیں   کا                     سرکار! کرم ازپئے حسّانِ مدینہ

قدموں   میں   بُلالیجئے بدکار کو آقا                           اور اِس کو بنالیجئے مہمانِ مدینہ

عطارؔ کو دولت نہ حُکومت کی طلب ہے

دیدیجے بقیع اس کو تو سلطانِ مدینہ

 

آہ اب وقتِ رخصت ہے آیا الوداع آہ شاہِ مدینہ

(مدینہ طیبہ کی پہلی بار حاضری کی سعادتِ عظمیٰ ۴۰۰اھ میں   حاصل ہوئی یہ الوداعی کلام رخصت کے وقت سنہری جالیوں   کے سامنے عین مواجہہ شریف کے قریب پیش کیا گیا)

آہ اب وقتِ رخصت ہے آیا        الوداع آہ شاہِ مدینہ

صدمۂ ہِجر کیسے سہوں   گا              الوداع آہ شاہِ مدینہ

بے قراری بڑھی جا رہی ہے         ہِجر کی اب گھڑی آ رہی ہے

دل ہوا جاتا ہے پارہ پارہ              الوداع آہ شاہِ مدینہ

کس طرح شوق سے میں  چلا تھا       دل کا غُنچہ خوشی سے کِھلا تھا

آہ! اب چُھوٹتا ہے مدینہ             الوداع آہ شاہِ مدینہ

کُوئے جاناں   کی رنگیں   فَضاؤ!        اے معطَّر مُعَنبر ہواؤ!

لو سلام آخِری اب ہمارا              الوداع آہ شاہِ مدینہ

کاش! قسمت مِرا ساتھ دیتی          موت بھی یاوَری میری کرتی

 



[1]     جنگل ۔

[2]     مثل ۔



Total Pages: 406

Go To