Book Name:Wasail e Bakhshish

رِحلَت کی گھڑی  ہے  مِرے  اللّٰہ  دِکھا  دے

صِرف ایک جھلک جلوۂ سرکارِ مدینہ

اللّٰہ  مجھے  بخش،  نہ  ہو  حَشر میں    پُرسِش

کر لُطف وکرم از پئے سرکارِ مدینہ

یارب دلِ عطّارؔ پہ چھائی ہے اُداسی

کر شاد دِکھا کر اسے گلزارِ مدینہ

 

الٰہی دکھادے جمالِ مد ینہ

اِلٰہی دِکھادے جمالِ مدینہ                            کرم سے ہو پورا سُوالِ مدینہ

عطا کیجئے حاضری کی سعادت                          عنایت ہو مجھ کو وصالِ مدینہ

دِکھا دے مجھے سبز گنبد کے جلوے                  دِکھا مجھ کو دَشت و جِبالِ([1]) مدینہ

پَہُنچ کر مدینے میں   ہوجائے مولا                     مِری جاں   فِدائے جمالِ مدینہ

مجھے ’’چل مدینہ‘‘ کا مُژدہ سنادو                      کرم یاشہِ خوش خِصالِ مدینہ

ہَوں   پیارے نبی! ختْم لمحاتِ فُرقَت                  مُیَسَّر ہو مجھ کو وِصالِ مدینہ

غمِ عشقِ سَروَر خدایا عطا کر                            مجھے از طُفیلِ بِلالِ مدینہ

خُدائے محمد ہمارے دلوں   سے                       نہ نکلے کبھی بھی خیالِ مدینہ

سدا رَحمتوں   کی برستی جَھڑی ہے                      مدینے میں   یہ ہے کمالِ مدینہ

مُعَطّر مُعَطّر ہے سب سے ُمنوَّر                         نہیں   دو جہاں   میں   مِثالِ مدینہ

سبھی پارہے ہیں  اِسی درسے میں  بھی                  ہوں   اُمّیدوارِ نَوالِ([2])مدینہ

قدم چوم کر سر پہ رکھ لینا عطّارؔ

نظر آئے گر نَونِہالِ([3])؎ مدینہ

 

مدّت سے مرے دل میں   ہے ارمانِ مدینہ

مُدّت سے مِرے دِل میں   ہے ارمانِ مدینہ                 روضے پہ بُلا لیجئے سُلطانِ مدینہ

اے کاش! پہنچ کے درِ جانانِ مدینہ                        ہوجاؤں   میں   سو جان سے قربانِ مدینہ

 



[1]     جِبال جَبَل کی جمع ہے،جبل یعنی پہاڑ ۔

[2]     احسان،بخشش ۔

[3]     بَہُت چھوٹا بچّہ ۔



Total Pages: 406

Go To