Book Name:Wasail e Bakhshish

تِرا شکریہ تاجدارِ مدینہ

{یہ کلام15 رَمَضانُ الْمُبارک۱۴۱۵ ھ کو مدینۃُ المنورہ میں   تحریر کرنے کی سعادت حاصل ہوئی }

تِرا شکریہ تاجدارِ مدینہ                        مجھے پھر دِکھایا دِیارِ مدینہ

حَسیں   پتّا پتّا حَسیں   ڈالی ڈالی                    حَسیں   سب کا سب لالہ زارِ مدینہ

خدا! دل سے دنیا کی اُلفت مِٹا دے           تُو دے اُلفتِ تاجدارِ مدینہ

بُھلا دے چمن کے نظاروں   کو بیشک           ہے ایسا حَسیں   رَیگزارِ مدینہ

میں   رِضوانِ جنّت کو تحفے میں   دونگا            عطا کیجئے چند خارِ مدینہ

مدینے میں   گھر سب کے غمخوار کا ہے         جبھی تو سبھی ہیں   نثارِ مدینہ

تجھے واسِطہ یاخدا مصطَفٰے کا                      بنا دے مجھے دلفِگارِ مدینہ

اگر ہو یقیں   زخم بھر جائیں   گے سب          لگا لو ذرا سا غُبارِ مدینہ

تڑپتے ہیں   جو ہِجر و فُرقت میں   آقا             دِکھا دو انہیں   بھی بہارِ مدینہ

اِدھر سے اُدھر کیوں   بھٹکتا پھروں   میں         مقدّر سے ہوں   رَیزہ خوارِ مدینہ

مدینے میں   مرنے کا مجھ کو شَرَف دو           کرم یانبی تاجدارِ مدینہ

دو عطّارؔ کو اشکبار آنکھ آقا

پئے غوث یاشہریارِ مدینہ

اللّٰہ عطا ہو مجھے دیدارِ مدینہ

(۱۲ شوال المکرم ۱۴۳۱ھ کو یہ کلام قلمبند کیا گیا)

 اللّٰہ    عطا   ہو    مجھے    دیدارِ  مدینہ

ہوجاؤں   میں   پھر حاضرِدربارِ مدینہ

آنکھیں   مِری محروم ہیں   مدّت سے الٰہی

عرصہ ہوا دیکھا نہیں   گلزارِ مدینہ

پھر دیکھ لوں   صَحرائے مدینہ کی بہاریں 

پھر پیشِ نظر کاش! ہوں   کُہسارِ مدینہ

پھر گنبدِ خَضرا کے نظارے ہوں   مُیَسَّر

 



Total Pages: 406

Go To