Book Name:Wasail e Bakhshish

ہے حُسن ہی سَراپا سرکار کا مدینہ

ہر سَمت رَحمتوں   کی بَرسات ہورہی ہے

ہے رَحمتوں   کا دَریا سرکار کا مدینہ

فُرقت کی آگ میں   جو دِل کو جَلارہے ہیں 

اُن کو دِکھا خُدایا سرکار کا مدینہ

اے زائرِ مدینہ! دِل کو سنبھال لینا!

دیکھ آ گیا مدینہ سرکار کا مدینہ

’’پیرِس‘‘ پہ مرنیوالے! ’’پیرِس‘‘ کو بھول جاتا

تُو بھی جو دیکھ لیتا سرکار کا مدینہ

 

ہے لاکھ لاکھ مولیٰ ہر آن شکر تیرا

اِک بار پھر دِکھایا سرکار کا مدینہ

پُھولوں   کو چُومتا ہوں  ، کانٹوں   کو چُومتا ہوں 

لگتا ہے مجھ کو پیارا سرکار کا مدینہ

جی چاہتا ہے میرا ہر شے یہاں   کی چُوموں 

کیسا ہے میٹھا میٹھا سرکار کا مدینہ

میری نظر کو بَھائے دُنیا کا حُسن کیسے؟

آنکھوں   میں   ہے سَمایا سرکار کا مدینہ

اللّٰہ! مُصطفٰے کے قدموں   میں   موت دیدے

مدفن بنے ہمارا سرکار کا مدینہ

عطّارؔ  کی  دعا  ہے  تقدیر  میں    خدایا

لکھ دے فَقَط مدینہ سرکار کا مدینہ

 

 



Total Pages: 406

Go To