Book Name:Wasail e Bakhshish

وَہاں   پیارا کعبہ یہاں   سبز گنبد                            وہ مکہ بھی میٹھا تو پیارا مدینہ

بُلا لیجئے اپنے قدموں   میں   آقا                           دکھا دیجئے اَب تو پیارا مدینہ

پھروں   گردِ کعبہ پیوں   آبِ زم زم                      میں   پھر آکے دیکھوں   تمہارا مدینہ

ٹلی مشکلیں   ہو گئی آفتیں   دور                            گیا جب کوئی غم کا مارا مدینہ

ہے شاہ و گدا مُفلس و اَغنِیا کا                              بِلا رَیب([1])سب کا گزارہ مدینہ

یہ دیوانے آقا! مدینے کو آئیں                            بُلالو اِنہیں   اب خُدارا مدینہ

خُدا گَر قِیامت میں   فرمائے مانگو                         پُکاریں   گے دیوانے پیارا مدینہ

مدینے میں   آقا ہمیں   موت آئے                       بنے کاش! مَدفن ہمارا مدینہ

اُسے سَیرِ گلشن سے کیا ہو سَروکار                        کِیا جِس نے تیرا نظارہ مدینہ

ضِیا پیرومرشد کے صَدقے میں   آقا                     یہ عطارؔ آئے دوبارہ مدینہ

ہے شہد سے بھی میٹھا سرکار کا مدینہ

ہے شَہد سے بھی میٹھا سرکار کا مدینہ

کیا خُوب مَہکا مَہکا سرکار کا مدینہ

ہم کو پسند آیا سرکار کا مدینہ

کیوں   ہو نہ اپنا نعرہ ’’سرکار کا مدینہ‘‘

ہر شہر سے ہے اچّھا سرکار کا مدینہ

جنّت سے بھی سُہانا سرکار کا مدینہ

بے کس کا ہے سہارا سرکار کا مدینہ

بے گھر کا ہے ٹِھکانا سرکار کا مدینہ

کُہسار دِلکُشا ہیں   صحرا بھی دلرُبا ہیں 

حُسن و جمال وَالا سرکار کا مدینہ

 

دونوں  جہاں  سے پیارا، کون ومکاں  سے پیارا

ہر آنکھ کا ہے تارا سرکار کا مدینہ

جنّت کا حُسن سارا اِس میں   سِمَٹ کر آیا

 



[1]     بے شک ۔



Total Pages: 406

Go To