Book Name:Wasail e Bakhshish

جب قبر کی تنہائی میں   گھبرائے مِرا دل

دینے کو دِلاسہ شہِ ابرار تو آنا

 

جب روزِ قیامت رہے اِک میل پہ سُورج

کوثر کا چھلکتا مجھے اِک جام پلانا

ہو عرصۂ محشر میں   مِرا چاک نہ پردہ

لِلّٰہ  مجھے  دامنِ  رَحمت  میں    چُھپانا

مَحشر میں   حساب آہ!میں   دے ہی نہ سکوں   گا

رَحمت نہ ہوئی ہوگا جہنَّم میں   ٹھکانا

فرمائیں  گے جس وَقت غلاموں  کی شفاعت

میں   بھی ہوں   غلام آپ کا مجھ کو نہ بُھلانا

فرما کے شَفاعت مِری اے شافِعِ محشر!

دوزخ سے بچا کر مجھے جنت میں   بسانا

یا شاہِ مدینہ!  مہِ رَمضان کا  صَدقہ

جنت میں   پڑوسی مجھے تم اپنا بنانا

اللّٰہ کی رَحمت سے یہ مایوس نہیں   ہے

ہوجائیگا عطّارؔ کی بخشش کا بہانہ

 

مدینہ مدینہ ہمارا مدینہ

مدینہ مدینہ ہمارا مدینہ                                    ہمیں   جان و دِل سے ہے پیارا مدینہ([1])

سُہانا سُہانا دِل آرا مدینہ                                 دِوانوں   کی آنکھوں   کا تارا مدینہ

یہ ہر عاشِقِ مصطَفٰے کہہ رہا ہے                           ہمیں   تو ہے جنت سے پیارا مدینہ

یہ رنگیں   فَضائیں   یہ مَہکی ہوائیں                           معطَّر مُعَنبر ہے سارا مدینہ

مَدینے کے جَلووں   کے قُربان جاؤں                       خدا نے ہے کیسا سَنوارا مدینہ

پَہاڑوں   میں   بھی حُسن کانٹے بھی دِلکَش                  بَہاروں   نے کیسا نِکھارا مدینہ

 



[1]     مَطلَعِ اوّل (پہلا شعر) کسی نامعلوم شاعر کا ہے اِسی بحر(وزن) پر اشعار موزوں   کئے ہیں  ۔سگِ مدینہ عفی عنہ ۔



Total Pages: 406

Go To