Book Name:Wasail e Bakhshish

مُقابِل دشمنِ اسلام کے ایسا بنا گویا

کوئی دیوار ہو سیسہ پِلائی یارسولَ اللّٰہ

یِہی ہے جُرم میرا سنّتوں   کا ادنیٰ خادِم ہوں 

ہے میں   نے سنّتوں   سے لو لگائی یارسولَ اللّٰہ

اگرچِہ لاکھ دشمن دھمکیاں   دے جان لینے کی

کسی سے کیوں   ڈرے تیرا فِدائی یارسولَ اللّٰہ

اگرچِہ جان جائے خدمتِ سنّت نہ چھوڑوں   گا

شہا! کرتے رہیں   مُشکِل کُشائی یارسولَ اللّٰہ

کسی صورت بھٹک سکتا نہیں   میں   راہِ سنّت سے

مجھے حاصِل ہے تیری رہنمائی یارسولَ اللّٰہ

 

ہِدایت دشمنوں   کو یانبی! ایسی عطا کر دو

یہ بن جائیں   مِرے اسلامی بھائی یارسولَ اللّٰہ

تمنّا ہے مِرے دشمن کریں   توبہ عطا کر دو

انھیں   دونوں   جہاں   کی تم بھلائی یارسولَ اللّٰہ

بچالو! نارِ دوزخ سے بِچارے حاسِدوں   کو بھی

میں   کیوں   چاہوں   کسی کی بھی بُرائی یارسولَ اللّٰہ

حُقُوق اپنے کئے ہیں   درگزر([1])دشمن کو بھی سارے

اگرچِہ مجھ پہ ہو گولی چلائی یارسولَ اللّٰہ

بَہَر صو رت مجھے مر نا پڑے گا پَر سعادت ہے

شہادت راہِ سنّت میں   جوپائی یارسولَ اللّٰہ

اندھیری قبر سے شاہِ مدینہ خوف آتا ہے

نظر میں   نے ہے رَحمت پر جمائی یارسولَ اللّٰہ

تمنّا ہے ترے عطارؔ کی یوں   دھوم مچ جائے

مدینے میں   شہادت اِس نے پائی یارسولَ اللّٰہ

 

یہ عرض گنہگار کی ہے شاہِ زمانہ

(۲۹محرم الحرام۱۴۳۳ھ۔ بمطابق2011-12-25)

 



[1]     بندے کا اپنے حقوق پیشگی معاف کر دینا کارِ ثواب ہے۔ تاہم حق تلفی کرنے والا گنہگار ہے۔



Total Pages: 406

Go To