Book Name:Wasail e Bakhshish

کرم کردو تَرَس کھاؤ دُکھی دل کی صدا سن لو

بلا مشتاق سے ہر اِک ہٹا دو یارسولَ اللّٰہ

سنو یا مت سنو یہ رٹ لگائے جائیں   گے ہم تو

شِفا دو یارسولَ اللّٰہ شِفا دو یارسولَ اللّٰہ

فَقَط اَمراضِ جسمانی کی ہی کرتا نہیں   فریاد

گناہوں   کے مرض سے بھی شِفا دو یارسولَ اللّٰہ

یہ پھر نیکی کی دعوت کے لئے دوڑے جہاں   بھر میں   

مِرے مشتاق کو ایسا بنا دو یارسولَ اللّٰہ

شہا مشتاق کو حج کی سعادت پھر عطا کردو

بُلاکر سبز گنبد بھی دکھا دو یارسولَ اللّٰہ

 

رِضا پر رب کی راضی ہیں   تمھارے ہم بھکاری ہیں 

ہماری آخِرت بہتر بنا دو یارسولَ اللّٰہ

گناہوں   سے میں   تو بہ کررہا ہُوں   رہنا تم شاھِد

مجھے اپنے خُدا سے بخشوا دو یارسولَ اللّٰہ

مجھے سکرات میں   کلمہ پڑھا کر میٹھی میٹھی نیند

کرم سے اپنے قدموں   میں   سُلا دو یارسولَ اللّٰہ

تمھاری یادمیں   ہر دم تڑپتا ہی رہوں   آقا!

مِرے سینے میں   عشق ایسا رَچا دویارسولَ اللّٰہ

مجھے اِذنِ مدینہ دو تمہیں   صدقہ نواسوں   کا

دکھا دو گنبدِ خضرا دکھا دو یارسولَ اللّٰہ

مری تاریک راتیں   جگمگا دو ازپئے شَیخین

مجھے تم جلوۂ زیبا دکھا دو یارسولَ اللّٰہ

شہا عطارؔ کا پیارا ہے یہ مشتاق عَطّاری

یِہی مُژدہ اسے تم بھی سنا دو یارسولَ اللّٰہ

اندھیری قبر میں   عطّارؔ پر اب خوف طاری ہے

پئے قُطبِ مدینہ جگمگا دو یارسولَ اللّٰہ

 



Total Pages: 406

Go To