Book Name:Wasail e Bakhshish

پڑوسی خُلد میں   بدکار کو اپنا بنا لیجے

جہاں   ہیں   اتنے اِحساں   اور اِحساں   یارسولَ اللّٰہ

مدینے میں   شہا عطّارؔ کو دوگز زمیں   دیدے

وَہیں   ہو دَفن یہ تیر ا ثَنا خواں   یارسولَ اللّٰہ

 

مِرے مشتاق کو کوئی دوا دو یارسول اللّٰہ

(دعوتِ اسلامی کی مرکزی مجلسِ شوریٰ کے مرحوم نگران حاجی مُشتاق عطّاری علیہ رحمۃ الباری کی سخت علالت کے ایّام میں   بارگاہِ رسالت  صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم میں   یہ استغاثہ پیش کیا گیا)

مِرے مشتاقؔ کو کوئی دوا دو یارسولَ اللّٰہ

دوا دیکر شفائے کامِلہ دو یارسولَ اللّٰہ

طبیبوں   نے مریضِ لادوا کہہ کہہ کے ٹالاہے

بنا، ناکام  ان کا عندِیہ([1])دو  یارسولَ اللّٰہ

مرا مشتاق مولیٰ کب تلک تڑپے گا بے چارہ

دعا بھی دو  دوا  بھی دو  شفا  دو  یارسولَ اللّٰہ

مرے مشتاق کے اُجڑے چمن میں   پھر بہار آئے

کلی پَژمُردہ دل کی تم کِھلا دو یارسولَ اللّٰہ

مرے مشتاقِ رنجیدہ پہ ہو چشمِ کرم آقا

بچارے غم کے مارے کو ہنسا دو یارسولَ اللّٰہ

کرم سے اب سرِ بالیں   شہا تشریف لے آؤ

اسے دیدار کا شربت پلا دو یارسولَ اللّٰہ

شِفا پا کر یہ نعتیں   پڑھ کے پھر تڑپانے لگ جائے

لُعاب اپنا اسے آکر چَٹا دو یارسولَ اللّٰہ

شہا مشتاق کب تک دربدر کی ٹھوکریں   کھائے

کہاں   جائے بچارا تم بتا دو یارسولَ اللّٰہ

 



[1]     رائے ۔



Total Pages: 406

Go To