Book Name:Wasail e Bakhshish

گھٹائیں   غم کی چھائیں   دِل پریشاں   یارسولَ اللّٰہ

گھٹائیں   غم کی چھائیں   دِل پریشاں  یارسولَ اللّٰہ

تُمہیں   ہو مجھ دُکھی کے دُکھ کا دَرماں  یارسولَ اللّٰہ

نگاہِ لُطف و رَحمت کے ہیں   خَواہاں   یارسولَ اللّٰہ

ہماری مشکلیں   ہوجائیں   آساں   یارسولَ اللّٰہ

بَجُز تو نَیست مُونِس نَیست ہَمدَ م رَحمتِ عالَم

نظر کُن جَانِبِ مَا بَدنَصیباں   یارسولَ اللّٰہ

سفینے کے پَرخچے اُڑ چکے ہیں   زَورِ طُوفاں   سے

سنبھالو!میں  بھی ڈوبا اے مِری جَاں   یارسولَ اللّٰہ

نسیمِ طیبہ سے کہدو دِلِ مُضطَر کو جھونکا دے

غموں   کی شام ہو صُبحِ بَہاراں   یارسولَ اللّٰہ

مَناظِر بے وَفا دُنیا کے ہوں   سب دُور نَظروں   سے

تصوُّر میں   رہیں   طیبہ کی گلیاں   یارسولَ اللّٰہ

نہ مُجھ کو آزما دُنیا کا مال و زَر عطا کرکے

عَطا کر اپنا غم اور چَشمِ گِریاں   یارسولَ اللّٰہ

 

تِرے دیدار کا طالِب لگائے آس بیٹھا ہوں 

خُدارا اب دکھادے رُوئے تابَاں  یارسولَ اللّٰہ

مِرا سینہ مدینہ ہو مدینہ میرا سینہ ہو

رہے سینے میں   تیرا درد پِنہاں ([1])یارسولَ اللّٰہ

سُنَہْری جَالیاں   ہوں   آپ ہوں   اور مجھ سا عاصی ہو

وہیں   یہ جاں   جُدا ہو جَانِ جاناں   یارسولَ اللّٰہ

مُجھے ہریالے گُنبد کے تَلے قدموں   میں   موت آئے

سلامت لے کے جاؤں   دین و ایماں   یارسولَ اللّٰہ

نہیں   حُسنِ عمل کوئی مِرے اَعمال نامے میں 

تری رَحمت مِری بخشش کا ساماں   یارسولَ اللّٰہ

 



[1]     چھپا ہوا ۔



Total Pages: 406

Go To