Book Name:Wasail e Bakhshish

اُس آنکھ پر نہ کیوں  کر قربان میری جاں   ہو

جِس آنکھ نے ہے دیکھا میٹھے نبی کا روضہ

جِس وقت رُوح تَن سے عطارؔ کی جُدا ہو

ہو سامنے خُدایا میٹھے نبی کا روضہ

 

شدائِد نَزع کے کیسے سہوں   گا یارسولَ اللّٰہ

شَدائد نَزع کے کیسے سَہوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

اندھیری قبر میں   کیسے رہوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

مجھے مرنا ہے آقا گنبدِ خَضرا کے سا ئے میں 

 وطن میں   مر گیا تو کیا کروں   گا  یارسولَ اللّٰہ

نہ چھوڑے جُرم چھٹتے ہیں   نہ مارے نفس مرتا ہے

نہ جانے نیک آخر کب بنوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

سدا میٹھی نظر رکھنا اگر تم ہو گئے ناراض

نہ ہر گز میں   کہیں   کا بھی رہوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

اندھیرا کاٹ کھاتا ہے اکیلے خوف آتا ہے

تو تنہا قبر میں   کیونکر رہوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

نکیرَین امتِحاں   لینے کو جب آئینگے تُربت([1])میں   

جوابات ان کو آقا کیسے دوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

برائے نام دردِ سر سہا جاتا نہیں   مجھ سے

 عذابِ قبر کیسے سہ سکوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

 

یہاں   چِیونٹی بھی تڑپا دے مجھے تو قبر کے اندر

میں   کیونکر ڈنک بچھّو کے سہوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

یہاں   معمولی گرمی بھی سہی جا تی نہیں   مجھ سے

تو گرمی حشر کی کیسے سہوں   گا  یارسولَ اللّٰہ

زمیں   تَپتی ہوئی خورشید بھی شعلہ فِشاں   ہوگا

 



[1]     قبر ۔



Total Pages: 406

Go To