Book Name:Wasail e Bakhshish

سرکار! حُبِّ دُنیا دِل سے مِرے نِکالو

دیوانہ اَب بنالو! اپنا مجھے خُدارا

تڑپا کروں   سَدا مَیں   اے کاش! تیرے غم میں   

ہائے! مُجھے زمانے کے رَنج و غم نے مارا

گِریہ کُناں   ہیں   یارب! شوقِ مدینہ میں   جو

طَیبہ کا کاش! وُہ بھی کرلیں   کَبھی نظارہ

رَنج واَلَم کے بَادَل سارے ہی چھٹ گئے ہیں 

جب بھی تڑپ کے ہم نے سرکار کو پُکارا

 ٹھکرا دے جس کو دنیا اُس کو گلے لگانا

یہ کام ہے تمہارا یامُصطَفٰے! تمہارا

 

طَیبہ میں   اَب تو مُجھ کو دو گز زمین دیدو

کب تک پِھروں   میں   دَر دَر سرکار مارا مارا

دے دو بقیع دے دو، مجھ کو بقیع دے دو

کردو سُوال پُورا پیارے نبی خُدارا

ہیں   مُصطفٰے مددگار اے دُشمنو خبردار!

یہ مت سمجھنا حامی کوئی نہیں   ہمارا

ہے  دُشمنوں    نے  گھیر ا   لِلّٰہِ کوئی  پَھیرا

یامُصطفٰے! خُدارا اَب آکے دو سہارا

کردے عَدُو کو غارت، حاسِد کو دے ہِدایت

پوری ہو قلبِ مُضطَر کی عرض کِردگارا

ظالِم ڈرا رہے ہیں  ، آنکھیں   دِکھا رہے ہیں   

آقا! دو جلد آکر عطّارؔ کو سہارا

 

 



Total Pages: 406

Go To