Book Name:Wasail e Bakhshish

دے جذبہ ’’مَدنی انعامات‘‘ کا تو                                کرم یا سیِّدِ ہر دو سرا ہو

میں   مَدنی قافِلوں   ہی کا مسافِر                                      رہوں   اکثر کرم ایسا شہا ہو

کرم ہو دعوتِ اسلامی پر یہ                                      شریک اِس میں   ہر اِک چھوٹا بڑا ہو

میں   سب دولت رہِ حق میں   لٹا دوں                                 شہا ایسا مجھے جذبہ عطا ہو

گناھوں   نے کہیں   کا بھی نہ چھوڑا                                 کرم مجھ پر حبیبِ کِبرِیا ہو

گناھوں   کی چُھٹے ہر ایک عادت                                  سُدھر جاؤں   کرم یامصطَفٰے ہو

کٹی ہے غفلتوں   میں   زندگانی                                     نہ جانے حشر میں   کیا فیصلہ ہو

کرم ہو واسِطہ کُل اولیا کا                                            مِرا ایماں   پہ مولیٰ  خاتِمہ ہو

مرے اعمال تولے جارہے ہیں                                     شفاعت شافِعِ روزِ جزا ہو

الٰہی ہوں   بَہُت کمزور بندہ                                        نہ دنیا میں   نہ عُقبیٰ میں   سزا ہو

بروزِ حَشْر آقا کاش! کہہ دیں

تم اے عطارؔ دوزخ سے رِہا ہو

 

کیا سبز سبز گنبد کا خوب ہے نظارہ

کیا سَبز سَبز گُنبد کا خُوب ہے نظارہ

ہے کس قَدَر سُہانا کیسا ہے پیارا پیارا

انوار یاں   چَھما چَھم برسائیں   اَبْر پَیْہَم

پُرنور سَبْز گُنبد پُرنُور ہر مَنارہ

پیشِ نظر ہو ہر دم بس سبز سبز گنبد

دِل میں   بَسا رہے بَس جلوہ سَدا تمہارا

سائے میں   سَبز گنبد کے توڑنے بھی دو دم

چارہ گرو! خُدارا کوئی کرو نہ چارہ

غوثُ الوریٰ کا صدقہ ایسا دے اپنا غم بس

روتے ہوئے ہی گُزرے سرکار! وقت سارا

سینہ بنے مدینہ دل میں   بسے مدینہ

یادوں   میں   اپنی رکھئے گُم یانبی! خدارا

 

مت چھوڑئیے مجھے اب دُنیا کی ٹھوکروں   پر

بَس آپ ہی کے ٹکڑوں   پر ہو مِرا گزارہ

 



Total Pages: 406

Go To