Book Name:Wasail e Bakhshish

جب آؤں   مدینے میں   تو ہو چاک گِرِیباں   

آنکھوں   سے برستی ہوئی اَشکوں  کی جَھڑی ہو

اے کاش! مدینے میں   مجھے موت یوں   آئے

چوکھٹ پہ تری سر ہو مری روح چلی ہو

 

جب لے کے چلو گورِغَریباں   کو جنازہ

کچھ خاک مدینے کی مِرے منہ پہ سجی ہو

جس وقت نکیرَین مِری قبر میں   آئیں   

اُس وَقت مِرے لب پہ سجی نعتِ نبی ہو

اللّٰہ! کرم ایسا کرے تجھ پہ جہاں   میں   

اے دعوتِ اسلامی تِری دھوم مچی ہو

صَدقہ مِرے مرشِد کا کرو دُور بلائیں   

ہو بِہتَرِی اُس میں   جو بھی ارمانِ دلی ہو

اللّٰہکی رَحمت سے تو جنَّت ہی ملے گی

اے کاش! مَحَلَّے میں   جگہ اُن کے ملی ہو

محفوظ سدا رکھنا شہا! بے اَدَبوں   سے

اور مجھ سے بھی سرزد نہ کبھی بے اَدَبی ہو

عطارؔ ہمارا ہے سرِحَشر اِسے کاش!

دستِ شَہِ بطحا سے یِہی چِٹھّی ملی ہو

 

بیاں   کیوں   کر ثنائے مصطَفٰے ہو

بیاں   کیوں   کر ثنائے مصطَفٰے ہو                                    خدا جب اُن کا خود مِدْحَت سرا ہو

مدینے کی محبت میں   جو روئے                                    عطا وہ آنکھ میٹھے مصطَفٰے ہو

سلامِ شوق کہدینا ادب سے                                      گزر ُسوئے مدینہ جب صبا ہو

تڑپ  کر   یارسولَ اللّٰہ  پکارو                                      نہیں   ممکن نہ آقا نے سنا ہو

عطا کردو مجھے وہ بھیک داتا                                         مرے سارے قبیلے کا بھلا ہو

کروں   بے لَوث خدمت سنتوں   کی                              شہا گرلطف مجھ پر آپ کا ہو

 



Total Pages: 406

Go To