Book Name:Wasail e Bakhshish

کرم ایسا شَہَنْشاہِ امم ہو

کہاں   سرکار دولت مانگتا ہوں 

مدینے کا عطا مجھ کو تو غم ہو

جب آقا آخِری وقت آئے میرا

مرا سر ہو ترا بابِ کرم ہو

کرے پرواز روحِ مُضطَرِب یوں 

ترے دربار میں   سر میرا خم ہو

بقیعِ    پاک   کی    لِلّٰہِ     اب    تو

اجازت مَرحَمت شاہِ حرم ہو

جو میٹھے مصطَفٰے کے غم میں   روئے

نہ کیوں   میری نظر میں   محترم ہو

 

ہمارے حالِ دل سے تم تو واقِف

خداوندِ دو عالم کی قسم ہو

اندھیرا لَحد([1])میں   ہے  آہ! چھایا

مرے نورِ خدا چشمِ کرم ہو

اسے کیا خوفِ محشر ہو کہ جس کا

تِرے دَستِ شَفاعت میں   بھرم ہو

مٹا سکتا نہیں   کوئی بھی اس کو

کہ حامی جس کا خود شاہِ اُمَم ہو

غمِ محبوب میں   روتی رہے جو

مجھے یارب عطا وہ چشمِ نم ہو

 

آج ''کیا کیا ''کِیا؟

 

 



[1]     قبر  



Total Pages: 406

Go To