Book Name:Wasail e Bakhshish

مَحَبّتمال کی چُھٹتی نہیں   ہے                               کرم! دنیا سے میرا دل بُرا ہو

میں   ایسا عاشقِ صادِق بنوں   کاش!                           ہنسی لب پر رہے دل رو رہا ہو

گناھوں   کے سبھی اَمراض ہوں   دور                        عطا میرے طبیب ایسی دوا ہو

کلیجے سے لگاتے ہیں   اُسے بھی                                جسے ہر ایک نے ٹھکرا دیا ہو

پڑوسی خُلد میں   اپنا بنا لو                                       کرم آقا پئے احمد رضا ہو

جگہ جنّت میں   قدموں   میں   وہ دینا                           جہاں   پر مرشِدی احمد رضا ہو

مِری قسمت کی جتنی گُتّھیاں   ہیں                             سُلَجھ سکتی ہیں   آقا تُم جو چاہو

عَدُو اُس کا بگاڑے گا بھلا کیا!                                 محمد مصطَفٰے کا جو گدا ہو

عنایت دین پر ہو استِقامت                                مِری مقبول یارب یہ دعا ہو

خدایا واسِطہ میٹھے نبی کا

شَرَف عطارؔ کو حج کا عطا ہو

 

اِک با ر پھر کرم شہِ خَیرُ الا نام ہو

اِک بار پھر کرم شہِ خیرُالانام ہو                            پھر جانبِ مدینہ روانہ غلام ہو

پھر جھومتا ہُوا میں   چلوں   جانبِ حِجاز                       مکّے میں   صُبح ہو تو مدینے میں   شام ہو

پیشِ نظر ہو گنبدِ خَضرا کی پھر بہار                           اے کاش! پھر مدینے میں   میرا قِیام ہو

ہو آنا جانا میرا مدینے میں   عمر بھر                            آخِر میں   زندگی کا وہیں   اِختِتام ہو

یوں   مجھ کو موت آئے تمہارے دِیار میں                 چوکھٹ پہ سر ہو لب پہ دُرُود و سلام ہو

یارب بچا لے تُومجھے نارِ جَحیمسے                       اولاد پر بھی بلکہ جہنَّم حرام ہو

دیوانے رو رہے ہیں   مدینے کے واسطے                     انکی بھی حاضری کا کوئی انتِظام ہو

دل کی مُراد پاگیا جو در پہ آگیا                               کوئی سبب نہیں   کہ نہ منگتے کا کام ہو

دشمن کا زَور بڑھ چلا ہے یاعلی مدد !                        اب ذُوالفِقارِ حَیدَری پھر بے نِیام ہو

بیکار گفتگو سے مری جان چھوٹ جائے                     ہر وقت کاش! لب پہ دُرُود و سلام ہو

ہو جائیں   ختم کاش! گناہوں   کی عادَتیں                     ایسا کرم اے سیِّد خیرُالانام ہو

احمدرضا کا صَدقہ مسلمان نیک ہوں                        نیکی کی دعوت آقا جہاں   بھر میں   عام ہو

آقا! غمِ مدینہ میں   رونا نصیب ہو                           ذِکرِ مدینہ لب پہ مرے صبح و شام ہو

ہو روح تیرے قدموں   پہ عطارؔ کی نثار

جس وقت اِس کی عمر کا لبریز جام ہو

 

جدھر دیکھوں   مدینے کا حرم ہو

جدھر دیکھوں   مدینے کا حرم ہو

 



Total Pages: 406

Go To