Book Name:Wasail e Bakhshish

طُوفان  کی موجوں   میں   جہاز اپنا گِھرا ہے

سرکار! بچالو اسے سرکار! بچالو

سرکار! مرے خون کا پیاسا ہوا دشمن

شہزادوں   کا صد قہ مجھے دشمن سے بچالو

 

اُوجَڑ ہوئی جاتی ہے مری زِیست کی بستی

ہو جائے گی آباد نظر لُطف کی ڈالو

ویران ہوا جاتا ہے خوشیوں   کا گلستاں 

اِس اُجڑے چمن پر بھی نِگہ لُطف کی ڈالو

دم توڑنے والا ہے گناہوں   کا مریض اب

اے جانِ مسیحا! اسے تم آکے بچالو

مرنے کا شَرَف اب تو مدینے میں   عطا ہو

دردر کی مجھے ٹھوکروں   سے شاہ بچالو

مدفن ہو عطا میٹھے مدینے کی گلی میں 

لِلّٰہِ پڑوسی  مجھے  جنّت  میں    بنا  لو

کھینچے لئے جاتے ہیں   جہنّم کو ملائک

اے شافِعِ محشر پئے شَیخَین بچالو

فُرقَت میں   تڑپتے ہیں   جو مِسکین بچارے

اَسباب عطا کر کے انہیں   در پہ بلالو

محبوبِ خدا! سر پہ اَجَل آکے کھڑی ہے

شیطان سے عطارؔ کا ایمان بچالو

 

سعادت اب مدینے کی عطا ہو

سعادت اب مدینے کی عطا ہو                               کرم چشمِ کرم یامصطَفٰے ہو

مدینے کی بہاریں   دیکھنے کی                                    اجازت مَرحَمت اب تو شہا ہو

وہ لمحاتِ مَسرَّت آئیں   پھر سے                               مِرے پیشِ نظر گُنبد ہرا ہو

سدا دل عشق میں   تڑپا کرے اور                             یہ تار اَشکوں   کا آنکھوں   سے بندھا ہو

سُنہری جالیوں   کے رُوبرو کاش!                            مِرا جلووں   میں   اُن کے خاتِمہ ہو

مرے آقا! برائے پیر و مرشد                              بقیعِ پاک میں   مدفن عطا ہو

جب آقا قبر میں   جلوہ نُما ہوں                                  تو لب پر ’’مرحبا یا مصطَفٰے‘‘ ہو

 



Total Pages: 406

Go To