Book Name:Wasail e Bakhshish

  اِذنِ طیبہ مُجھے سرکارِمدینہ  دے دو

اِذنِ طیبہ مُجھے سرکارِمدینہ دے دو                 لے چلے مُجھ کو جو طیبہ وہ سفینہ دیدو

یادِ طیبہ میں   تڑپنے کا قرینہ دیدو                     چشمِ تَر، سوزِ جگر شاہِ مدینہ دیدو

پھونک دے جومِری خوشیوں([1])   کانشیمن آقا          چاک دِل، چاک جگر سَوزِشِ سینہ دیدو

چار یاروں   کا تُمہیں   واسِطہ دیتا ہوں   شہا!            اپنا غم مُجھ کو شہَنشاہِ مدینہ دیدو

وقتِ آخِر ہے چلی جَان رسُولِ اکرم                اِک جھلک اے مرے سلطانِ مدینہ دیدو

صَدقہ شہزادیِ کَونَیْن کا قدموں   میں   موت       مُجھ کو دیدو مِرے سلطانِ مدینہ دیدو

کثرتِ مال کی آفت سے بچا کر آقا

اپنے عطّارؔ کو اُلفت کا خزینہ دیدو

 

 

غیبت سےمحفوظ رہنے کاطریقہ

 

حضرتِ علامہ مَجدُالدّین فیروز آبادی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ سے منقول ہے :جب کسی مجلس میں(یعنی لوگوں میں)بیٹھواورکہو:تو اللہ عَزَّوَجَلَّ تم پر ایک فِرِشتہ مقرّر فرمادے گا جو تم کو غیبت سے بازرکھے گا۔اور جب مجلس سے اُٹھو تو کہو: بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم وَصَلَّی اللہُ عَلٰی مُحَمَّد تو اللہ عَزَّوَجَلَّ تم پر ایک فِرِشتہ مقرّر فرمادے گا جو تم کو غیبت سے بازرکھے گا۔اور جب مجلس سے اُٹھو تو کہو: بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم وَصَلَّی اللہُ عَلٰی مُحَمَّد تو فِرِشتہ لوگوں کو تمہاری غیبت کرنے سے بازرکھے گا ۔

(اَلْقَوْلُ الْبَدِ یع ص۲۷۸)

 

پھر گنبدِ خَضرا کی فَضاؤ ں   میں   بُلالو

پھر گنبدِ خَضرا کی فضاؤں   میں   بُلالو

سرکار بلا کر مجھے قدموں   سے لگالو

قدموں   سے لگا کر مجھے دیوانہ بنالو

دنیا کی مَحَبَّت کو مرے دل سے نکالو

گو خوار و گنہگار ہوں   جیسا ہوں  تمھارا

سرکار! نبھالو مجھے سرکار نبھالو

صدقہ مجھے سرکار نواسوں   کا عطا ہو

اَغیار کے ٹکڑوں   سے شہنشاہ بچالو

یاشاہِ مدینہ مری امداد کو آؤ

آفات و بَلیّات کے پنجوں   سے نکالو

 



[1]     یہاں   یادِ خدا ومصطفٰے سے دُور کرنی والی غفلت بھری خوشیوں  مراد ہیں  ۔۱۲منہ سگِ مدینہ



Total Pages: 406

Go To