Book Name:Wasail e Bakhshish

اُف! ہائے گُھپ اندھیرا چمکانے گورِ تِیرہ

کب اے مہِ منوَّر تشریف لا رہے ہیں 

اے تِشنَگانِ محشر دیکھو کرم کے پیکر

کوثر کا لے کے ساغَر تشریف لا رہے ہیں 

بدکارو! رکّھو ہمت فرمائیں   گے شَفاعت

دیکھو شفیعِ محشر تشریف لا رہے ہیں 

عطارؔ اب خوشی سے پھولا نہیں   سماتا

دنیا میں   اس کے سرور تشریف لا رہے ہیں

 

جاہ وجلال دو نہ ہی مال و مَنال دو

جاہ و جلال دو نہ ہی مال و مَنال دو                    سَوزِ بلال بس مِری جھولی میں   ڈال دو

دُنیا کے سَارے غم مرے دل سے نکال دو      غم اپنا یاحبیب! برائے بِلال دو

ہِجر و فِراق تو مِلا دو اِضْطِراب بھی                   بے تاب قَلب اَز پئے سَوزِ بلال دو

بہتی رہے جو ہر گھڑی بس یاد میں   شہا!             وہ چَشمِ اَشْکبار پئے ذُوالجلال دو

سینہ مدینہ ہو مِرا دِل بھی مدینہ ہو                  فِکرِ مدینہ دو مجھے مَدَنی خیال دو

ہر آن بس تصوُّرِ طیبہ میں   گُم رہوں                 ایسا بُلند شاہِ مدینہ! خیال دو

دو دَرد سنّتوں   کا پئے شاہِ کربلا                       اُمّت کے دِل سے لَذّتِ عصیاں   نکال دو

خُلقِ عظیم سے مجھے حصّہ عطا کرو!                 بے جَا ہنسی کی خَصلَتِ بد کو نکال دو

ذِکْر و دُرُود ہر گھڑی وِردِ زَباں   رہے               میری فُضُول گوئی کی عادَت نکال دو

دونوں   جہاں   کی آفتیں   مولا مُصیبتیں             صَدقے میں   میرے غوث کے سرکار! ٹال دو

عطّارؔ کو بُلا کے مدینے میں   دو بقیع

’’دو پھولوں ([1]) ‘‘ کے طُفَیْل ہوں   پُورے سُوال دو

 

 



[1]     ’’دو پھولوں  ‘‘ سے یہاں   حسنینِ کریمین رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہما  مُراد ہیں  ۔



Total Pages: 406

Go To