Book Name:Wasail e Bakhshish

دیکھو مہِ مُنوَّر تشریف لا رہے ہیں 

اے بے نواؤ آؤ، آؤ گداؤ آؤ

وہ آمِنہ کے گھر پر تشریف لا رہے ہیں 

تیری حلیمہ دائی تقدیر مسکرائی

محبوبِ حق ترے گھر تشریف لا رہے ہیں 

 

اُمَّت کے ناز اٹھانے اُمَّت کو بخشوانے

اللّٰہ کے پَیَمبر تشریف لا رہے ہیں 

آج ازپئے وِلادت جی ہاں   ملے گی جنَّت

مختارِ خُلد و کوثر تشریف لا رہے ہیں 

خود چل کے منزِل آئے آکر گلے لگائے

بھٹکے ہوؤں   کے رہبر تشریف لا رہے ہیں 

وقتِ ولادت آیا ہے شور مرحبا کا

دونوں   جہاں   کے سرور  تشریف لا رہے ہیں 

شیطاں   کی آئی شامت کیوں   دور ہو نہ ظلمت

ہاں   ہاں   عرب کے خاوَر تشریف لا رہے ہیں 

کِسریٰ کا قَصرشَق ہے شیطاں   کا رنگ فَق ہے

دیکھو! رسولِ انور تشریف لا رہے ہیں

 

تعظیم کے لئے اب اے مومِنو اُٹھو سب

آرامِ جانِ مُضطَر تشریف لا رہے ہیں 

اپنا غلام کہنے، اِس اُجڑے دل میں   رہنے

کب اے غریب پرور تشریف لا رہے ہیں 

 



Total Pages: 406

Go To