Book Name:Wasail e Bakhshish

عطارؔ کو وہ لیکر جنّت میں   جا رہے ہیں 

 

محبوبِ ربِّ اکبر تشریف لارہے ہیں 

محبوبِ ربِّ اکبر تشریف لارہے ہیں 

آج انبیا کے سَرور تشریف لا رہے ہیں 

کیوں   ہے فَضا مُعطَّر! کیوں   روشنی ہے گھر گھر

اچّھا! حبیبِ داوَر تشریف لا رہے ہیں 

عیدوں   کی عید آئی رَحمت خدا کی لائی

جُود و سخا کے پیکر تشریف لا رہے ہیں 

حوریں   لگیں   ترانے نعتوں   کے گنگنانے

حور و ملک کے افسر تشریف لا رہے ہیں 

عالم میں   ہیں   جو یکتا، بے مثل ہیں   جو آقا ([1])

وہ آمِنہ ترے گھر تشریف لا رہے ہیں 

اے فَرشیو مبارَک اے عَرشیو مبارَک

دونوں   جہاں   کے سروَرتشریف لا رہے ہیں 

اے بے کسو مبارَک اے بے بسو مبارَک

اب غمزدوں   کے یاور تشریف لا رہے ہیں 

جھومو اے بدنصیبو! ہو جاؤ خوش غریبو!

دیکھو غریب پروَر تشریف لا رہے ہیں 

کیسا ہے پیارا منظر رنگین و روح پرور

ہر ایک سے حسیں   تر تشریف لا رہے ہیں 

رحمت برس رہی ہے ہرسَمت روشنی ہے

 



[1]     یہ مصرع ’’مفتش‘‘ نے موزوں   کیا



Total Pages: 406

Go To