Book Name:Wasail e Bakhshish

بِپھری ہوئی موجوں   میں   جب اُنکو پکارا ہے                   طُوفان سے کِشتی کو وہ پَار لگاتے ہیں

جتنے بھی ہیں   دیوانے ان سب کو بُلا لیجے                      ارمان غریبوں   کو طیبہ کے رُلاتے ہیں

یہ آپ کی مرضی ہے جن پر بھی کرم کردیں                 جنّت کی سَنَد دینے روضے پہ بُلاتے ہیں

وہ حَشر کے مَیداں   میں   دامن میں   چُھپائیں   گے             ہم سب کے یَہاں   پر بھی جو عَیْب چُھپاتے ہیں

غم مُجھ کو مدینے کا سرکار عطا کردو!                          آزار زمانے کے بیکار رُلاتے ہیں

قُربان! سرِ محشر ہم پیاس کے ماروں   کو                       بھر بھر کے وہ کوثر کے کیا جَام پِلاتے ہیں  !

عَرصہ ہُوا اے آقا! طیبہ سے جُدائی کو

عطارؔ کو کب جاناں  ! پھر در پہ بلاتے ہیں

 

جو مدینے کے تصوُّر میں   جِیا کرتے ہیں   

جو مدینے کے تصوُّر میں   جِیا کرتے ہیں 

ہر جگہ لطف مدینے کا لیا کرتے ہیں   

عشقِ سرور میں   جو ہستی کو فنا کرتے ہیں   

بھید الفت کے فَقَط اُن پہ کُھلا کرتے ہیں 

مال ودولت کی دعا ہم نہ خدا کرتے ہیں 

ہم تو مرنے کی مدینے میں   دعا کرتے ہیں 

آگ دوزخ کی جلا ہی نہیں   سکتی ان کو

عشق کی آگ میں   دل جن کے جَلا کرتے ہیں 

دُرِّ نایاب بِلاشک ہیں   وہ ہیرے انمول

اشک آقاکی جو یادوں   میں   بہا کرتے ہیں 

درد وآلام میں   تسکین انہیں   ملتی ہے

نام انکا جو مصیبت میں   لیا کرتے ہیں 

 

تُو سلام اُن سے درِ پاک پہ جاکر کہنا

التجا تجھ سے ہم اے بادِ صبا کرتے ہیں 

 



Total Pages: 406

Go To