Book Name:Wasail e Bakhshish

 

مدینے کی تمنّا میں   جئے جاتے ہیں   دیوانے

کہ جانے کب ہمیں   آقا مدینے میں   بلاتے ہیں   

حسدکی آگ میں  جل بُھن کے شیطاں  خاک اڑاتاہے

ترا جشنِ ولادت دھوم سے جب ہم مناتے ہیں   

خدا و مصطَفٰے ناراض ہوتے ہیں   سنو ان سے

جو داڑھی کو مُنڈاتے ہیں   یامُٹّھی سے گھٹاتے ہیں 

غلامو، مت ڈرو محشر کی گرمی سے چلے آؤ

وہ کوثر کے پیالے بھر کے پیاسوں   کو پلاتے ہیں   

نظارے ان کے آگے ہیچ ہوتے ہیں  گلستاں   کے

جو صَحرائے مدینہ کے مناظر دیکھ آتے ہیں 

نہیں   ہیں   نیکیاں   پلّے مگر گھبرا نہ اے عطّارؔ

خطاکاروں   کو بھی وہ اپنے سینے سے لگاتے ہیں 

 

یادِ شہِ بطحا میں   جو اشک بہاتے ہیں 

یادِ شہِ بطحا میں   جو اَشک بہاتے ہیں                           گھر بیٹھ کے طیبہ کا وُہ لُطف اُٹھاتے ہیں

جو یادِ مدینہ کو سینوں   میں   بَساتے ہیں                         جینے کا مزہ ایسے عُشّاق ہی پاتے ہیں

کِس پیار سے اُمّت کے وہ ناز اُٹھاتے ہیں                      عصیاں   کو غلاموں   کے  اَشکوں   سے مٹاتے ہیں

وہ اپنے غلاموں   کو دوزخ سے بچاتے ہیں                      اللّٰہ کی رحمت سے جنّت میں   بساتے ہیں

سرکار کِھلاتے ہیں   سرکار پِلاتے ہیں                           سلطان و گدا سب کو سرکار نبھاتے ہیں

روتے ہیں   تڑپتے ہیں   یہ آپ کے دیوانے                   سرکار مدینے کو پھر قافِلے جاتے ہیں

 



Total Pages: 406

Go To