Book Name:Wasail e Bakhshish

مدینہ دل کے اندر ہو دلِ مُضطَر مدینے میں

 

مجھے نیکی کی دعوت کیلئے رکّھو جہاں   بھی کاش!

میں   خوابوں   میں   پہنچتا ہی رہوں   اکثر مدینے میں   

نہ دولت دے نہ ثروت دے مجھے بس یہ سعادت دے

ترے قدموں   میں   مرجاؤں   میں   رو رو کر مدینے میں 

عطا کر دو عطا کر دو بقیعِ پاک میں   مدفن

مِری بن جائے تربت یاشہِ کوثر مدینے میں 

مدینہ اس لیے عطارؔ جان و دل سے ہے پیارا

کہ رہتے ہیں   مِرے آقا مِرے سرور مدینے میں

 

 

 

دیوث کی تعریف

جو شخص اپنی بیوی یا کسی محرم پر غیرت نہ کھائے(وہ ’’دیُّوث‘‘ ہے) (درالمختار، ، ج۶، ص۱۱۳) باوُجُودِ قدرت اپنی زَوجہ ، ماں بہنوں اور جوان بیٹیوں وغیرہ کو گلیوں بازاروں ، شاپنگ سینٹروں اورمَخْلُوط تفریح گاہوں میں بے پردہ گھومنے پھر نے، اجنبی پڑوسیوں، نامَحرم رشتے داروں ، غیرمَحرم ملازِموں، چوکیدار وں اور ڈرائیوروں سے بے تَکلُّفی اور بے پر دَ گی سے مَنع نہ کرنے والے دَیُّوث، جنّت سے محروم اور جہنَّم کے حقدار ہيں۔

 

مٹتے ہیں   جہاں   بھر کے آلام مدینے میں 

مٹتے ہیں   جہاں   بھر کے آلام مدینے میں                          بگڑے ہوئے بنتے ہیں   سب کام مدینے میں

آقا کی عنایت ہے ہرگام([1]) مدینے میں                          ہوتا نہیں   کوئی بھی ناکام مدینے میں

اے حاجیو! رو رو کر کہدینا سلام ان سے                        لے جاؤ غریبوں   کا پیغام مدینے میں

آجاؤ گنہگارو بے خوف چلے آؤ                                  سرکار کی رحمت تو ہے عا م مدینے میں

وہ شافِعِ محشر تو بُلوا کے غلاموں   کو                                دیتے ہیں   شَفاعت کا اِنعام مدینے میں

چھیڑو نہ طبیبو تم بیمارِمدینہ کو                                   اِس کو تو ملے گا بس آرام مدینے میں

جتنے بھی مبلِّغ ہیں   ہو خاص کرم اُن پر                            سب آئیں   شَہَنشاہِ اِسلام مدینے میں

دربار میں  جب پہنچوں   اے کاش! شہا اُس دم                   دیدار کا ہو جائے اِنعام مدینے میں

اے کاش! کہ رو رو کر دم توڑ دوں   قدموں   میں                   ہو جائے مِرا بِالخیر انجام مدینے میں

اللّٰہ قِیامت تک جس کا نہ خُمار([2])اُترے                      اُلفت کا پیوں   ایسا اِک جام مدینے میں

 



[1]     ہر قدم     ۔

[2]     نشہ ۔



Total Pages: 406

Go To