Book Name:Wasail e Bakhshish

بُلوا کے شہنشاہِ اَبرار مدینے میں 

جلووں   سے دلِ ویراں   آباد کرو جاناں   

بُلوا کے شہنشاہِ اَبرار مدینے میں 

 سگ اپنا مجھے کہہ دو قدموں   میں   مجھے رکھ لو

بُلوا کے شہنشاہِ اَبرار مدینے میں 

قدموں   سے لگالو تم دیوانہ بنالو تم

بُلوا کے شہنشاہِ اَبرار مدینے میں 

قسمت مری چمکا دو تربت مِری بنوا دو

بُلوا کے شہنشاہِ اَبرار مدینے میں 

رَمضاں   کی بہاریں   ہوں   طیبہ کی فَضائیں   ہوں   

اور جھومتا پھرتا ہو عطار مدینے میں 

 

بُلالو پھر مجھے اے شاہِ بَحرو بَر مدینے میں 

بلا لو پھر مجھے اے شاہِ بحرو بَر مدینے میں 

میں   پھر روتا ہوا آؤں   تِرے دَر پر مدینے میں 

میں  پہنچوں  کوئے جاناں  میں  گریباں  چاک سینہ چاک

گرا دے کاش مجھ کو شوق تڑپا کر مدینے میں 

مدینے  جانے  والو  جاؤ  جاؤ  فی امانِ اللّٰہ

کبھی تو اپنا بھی لگ جائے گا بستر مدینے میں 

سلامِ شوق کہنا حاجیو میرا بھی رو رو کر

تمہیں   آئے نظر جب روضئہ انور مدینے میں   

پیامِ شوق لیتے جاؤ میرا قافِلے والو

سنانا داستانِ غم مری رو کر مدینے میں   

مِرا غم بھی تو دیکھو میں   پڑا ہوں   دُور طیبہ سے

سُکوں   پائے گا بس میرا دلِ مُضطَر مدینے میں 

 

نہ ہو مایوس دیوانو پکارے جاؤ تم ان کو

بُلائیں   گے تمہیں   بھی ایک دن سرور مدینے میں   

 



Total Pages: 406

Go To