Book Name:Wasail e Bakhshish

 

پاؤں   وہ آنکھ تجھ سے اے پروردگار میں   

پاؤں   وہ آنکھ تجھ سے اے پروردگار میں                         روتا رہوں   غمِ نبی میں   زار زار میں

دن رات ہجرِ شاہ میں   آہیں   بھرا کروں                           رویا کروں   فِراق میں   زاروقِطار میں

کہنا نہ حج مبارَک اے اہلِ وطن مجھے                           ہائے فِراقِ طیبہ سے ہوں   دلفِگار میں

داغِ مُفارَقت([1]) تو ملا کاش! اب ایسا ہو                           رویا کروں   فِراق([2])میں   زاروقِطار میں

سینہ تَپاں   عطا ہو ملے قلبِ مُضطَرِب                           غم میں   تمہارے کاش! رہوں   بے قرار میں

دشتِ حرم پہ واری میں  ، قُمری([3])چمن پہ تُو                      تُو پھول لے لے طیبہ کا لیتا ہوں   خار میں

وہ دن اب آئے خیر سے یاربِّ مصطَفٰے                         سُوئے مدینہ چل پڑوں   پھر اشکبار میں

جوں   ہی مجھے حبیب کا جلوہ نصیب ہو                            اے کاش! جان اُس گھڑی کردوں   نثار میں

زُہدووَرَع میں   یانبی تم بے مثال ہو                             بے حد گناہگار میں   عصیاں   شِعار میں

گم ہو کے عشقِ مصطَفٰے میں   اے خدائے پاک                   کرتا رہوں   بیان سدا اشکبار میں

تبلیغِ دین کے لیے در در پھروں   اے کاش!                     طالب ہوں   ایسے ولولے کا کردگار میں

عطارؔ نیکیاں   نہ تھیں   زادِ سفر میں   کچھ

لے کر گیا تھا در پہ بس اشکوں   کا ہار میں

 

اے کا ش کہ آجا ئے عطّار مدینے میں 

(اَلحَمدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّ  ۲۵ شعبانُ المعظم ۱۴۱۴ ھ کو یہ مَعروضہ پیش کیا گیا)

اے کاش کہ آجائے عطارؔ مدینے میں 

بُلوا لو خُدارا! اب سرکار مدینے میں   

کب تک میں   پھر وں   در در مرنے بھی دو اب سرور!

دَہلیز پہ سر رکھ کر سرکار مدینے میں   

روضے کے قریب آکر گِر جاؤں   میں   غش کھاکر

ہوجائے تمہارا پھر دیدار مدینے میں   

روتی ہوئی آنکھوں   سے بیتاب نگاہوں   سے

 



[1]     جُدائی ۔

[2]     جُدائی ۔

[3]     فاختہ کی قسم کا ایک طَوق دار پرندہ ۔



Total Pages: 406

Go To