Book Name:Wasail e Bakhshish

میری عید آج ہے میری معراج ہے                       میں   یہاں   آگیا میں   مدینے میں   ہوں

ان کے دربار و در اور دیوار پر                               نور ہے چھا رہا میں   مدینے میں   ہوں

ہے کرم ہی کرم ہاں   خدا کی قسم                            کھاکے ہوں   کہہ رہا میں   مدینے میں   ہوں

خوب اُمنڈ آئی ہے ہر طرف چھائی ہے                    رحمتوں   کی گھٹا میں   مدینے میں   ہوں

آنکھ میں   ہے سجی تن پہ بھی ہے لگی                        میرے خاکِ شِفا میں   مدینے میں   ہوں

مجھ کو تقدیر پر اس کی تنویر([1]) پر                           رشک ہے آرہا میں   مدینے میں   ہوں

دو بقیعِ مبارک میں   دوگز زمیں                               تم سے ہے التجا میں   مدینے میں   ہوں

موت قدموں   میں   دو اپنے عطارؔ کو                         ہو کرم سرورا میں   مدینے میں   ہوں

 

نہ دولت نہ مال اور خَزینے کی باتیں 

نہ دولت نہ مال اور خَزینے کی باتیں    سناؤ ہمیں   بس مدینے کی باتیں

مدینے کی باتیں   سناؤ کہ ہیں   یہ        مریضِ محبت کے جینے کی باتیں

مُقَدَّس ہیں   دیگر مہینے بھی لیکن      نِرالی ہیں   حج کے مہینے کی باتیں

سناؤ نہ پیرس کے قصّے، سناؤ   مدینے کے پیارے سفینے کی باتیں

نہ کر مُشک و عنبر کی باتیں  ، بیاں   کر          نبی کے مُعَطَّر پسینے کی باتیں

مِری یاوَہ گوئی کی عادت نکالو                 کروں   میں   ہمیشہ قرینے کی باتیں

فُضول اور بیکار باتوں   کے بدلے             کروں   کاش! ہر دم مدینے کی باتیں

گوگرمی میں  مشروب ٹھنڈاہے مرغوب       کرو جام آقا سے پینے کی باتیں

شہا میرا! سینہ مدینہ بنادو                      خیالوں  میں  ہوں  بس مدینے کی باتیں

بنے کاش! عطارؔ ایسا مبلّغ

مُؤثِّر ہوں   آقا کمینے کی باتیں

 

دل کو سُکوں   چمن میں   نہ ہے لالہ زار میں 

دل کو سُکوں   چمن میں   نہ ہے لالہ زار([2])میں 

سوزو گُداز ہے فَقَط ان کے دِیار([3])میں 

 



[1]     روشنی ،نورانیت، چمک ۔

[2]     باغ ۔گلزار   ۔

[3]     شہر  ۔



Total Pages: 406

Go To