Book Name:Wasail e Bakhshish

 چغلی کی تعریف

 کسی کی بات ضَرر (یعنی نقصان )پہنچانے کے اِرادے سے دُوسروں کو پہنچانا چُغلی ہے ۔  (عُمدۃُ القاری ج۲ ص۵۹۴ تحتَ الحدیث ۲۱۶)

 

ہے یہ فضلِ خدا، میں   مدینے میں   ہوں 

(اَلحمد للّٰہ عزوجَلَّ مدینہ منورہ (محرم الحرام ۱۴۲۲.ھ )کی حاضری کے پُرکیف لمحات میں   یہ کلام قلم بند کیا)

ہے یہ فضلِ خدا، میں   مدینے میں   ہوں         ہے اُسی کی عطا میں   مدینے میں   ہوں

یارسولِ خدا میں   مدینے میں   ہوں               تم نے بلوا لیا میں   مدینے میں   ہوں

گو گنہگار ہوں  ، میں   بداَطوار ہوں               پر کرم ہے تِرا میں   مدینے میں   ہوں

سر پہ عصیاں   کا بار، آہ! ہے نامدار              پر کرم ہے تِرا میں   مدینے میں   ہوں

جُرم کی حد نہیں  ، شاہِ دُنیا و دیں                  پر کرم ہے تِرا میں   مدینے میں   ہوں

کوئی خوبی نہیں  ، پاس نیکی نہیں                  پر کرم ہے تِرا میں   مدینے میں   ہوں

سخت بدکار ہوں  ، معصیت کار ہوں             پر کرم ہے تِرا میں   مدینے میں   ہوں

میرا قلبِ سِیَہ، دیجئے جگمگا                     اب تو نُورِ خدا میں   مدینے میں   ہوں

زَنگ کافُور ہو، قلب پُر نور ہو                  کردو چشمِ عطا میں   مدینے میں   ہوں

ہے یہ رَحمت تِری، اور عنایت تری           ساتھ ہے قافِلہ میں   مدینے میں   ہوں

جانتے ہو میں   کیوں  ، آیا طیبہ میں   ہوں          ہیں   یہاں   مصطَفٰے میں   مدینے میں   ہوں

 

مُرشِدی نے کہا، تُو نہیں   جا رہا                        بلکہ ہے آ رہا میں   مدینے میں   ہوں([1])

اپنے مِہمان کو غم مدینے کا دو                        سروَرِ انبیا میں   مدینے میں   ہوں

آنکھ رویا کرے، قلب تڑپا کرے                  کردو ایسی عطا میں   مدینے میں   ہوں

شاہِ خیرالانام اپنی اُلفت کا جام                       اِک چَھلکتا پلا میں   مدینے میں   ہوں

دیدو سینہ فِگار آنکھ بھی اشکبار                        دل تڑپتا ہوا میں   مدینے میں   ہوں

آمِنہ کے پِسَر مجھ کو خَستہ جگر                        اب تو کردو عطا میں   مدینے میں   ہوں

ایسی مَستی ملے ہوش جاتا رہے                      ایسا مجھ کو گُما میں   مدینے میں   ہوں

 



[1]     اس شعر کا پس منظر یہ ہے کہ جب پہلی بار (۱۴۰۰ھ بمطابق 1980ء)حاضریِ مدینۂ منورہ کے بعد وطن واپسی کا وقت آیا، بارگاہِ رسالت صلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّممیں   الوداعی حاضری دیکر سیدی مرشِدی قطبِ مدینہ رحمۃ اللّٰہ تعالٰی علیہ کی بارگاہ میں   حاضِر ہوا اور رو رو کر عرض کی کہ میں   وطن جا رہا ہوں   تو مرشِد کی زبان سے نکلا ’’ تم جانہیں   آ رہے ہو‘‘ اُس وقت تو یہ ارشاد میری موٹی عقل میں   نہ آیا مگر بعد میں   سمجھ میں   آ گیا کیوں   کہ فیضِ مرشِد سے اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ عَزَّوَجَلَّ  بے شمار بار سفرِ مدینہ درپیش آیا کہ مرشِدی نے جو فرمایا تھاکہ’’ تم جا نہیں   آ رہے ہو‘‘۔



Total Pages: 406

Go To