Book Name:Wasail e Bakhshish

کہتا تھا مجھے حاضِری کا اِذن دِلانا

اے عازِمِ طیبہ! میں   طلبگارِ دعا ہوں 

 

کہنا بڑا عرصہ ہوا طیبہ نہیں   پہنچا

برسوں   سے نہیں   دیکھ سکا گنبدِ خضرا

مسکین کو اب قدموں   میں   سرکار بلانا

اے عازِمِ طیبہ! میں   طلبگارِ دعا ہوں 

اے راہِ مدینہ کے مسافر تو ٹَھَہر کر

مجبور  کی  بِپتا  ذرا  سُن  کان  کو  دھر  کر

کر حق سے دعا رنج و الم اِس کے مٹانا

اے عازِمِ طیبہ! میں   طلبگارِ دعا ہوں 

تو رب کا ہے مہماں   رہِ جاناں   کا ہے عازِم([1])

میں   سخت گنہگار و خطا کار ہوں   مجرم

اللّٰہ سے کر عرض اِسے دوزخ سے  بچانا

اے عازِمِ طیبہ! میں   طلبگارِ دعا ہوں 

اللّٰہ کے گھر کا جُوں   ہی دیکھے تو دَوارا ([2])

جس وقت کہ کعبے کا کرے پہلا نظارہ

گر ہوش ہوں   قائم ترے مجھ کو نہ بُھلانا

اے عازِمِ طیبہ! میں   طلبگارِ دعا ہوں 

 

رو رو کے تو کرنا مِرے حق میں   یہ دعائیں 

بولے نہ فضول اور رکھے نیچی نگاہیں 

کر عرض خدا سے تو اسے نیک بنانا

اے عازِمِ طیبہ! میں   طلبگارِ دعا ہوں 

بَہکاتا ہے شیطان تو ہے نفس ستاتا

توبہ بھی بَہُت کرتا ہے پَر بچ نہیں   پاتا

کر حق سے دعا اِس کوگناہوں   سے بچانا

 



[1]     مسافر ۔

[2]     دروازہ ۔



Total Pages: 406

Go To