Book Name:Wasail e Bakhshish

جلوہ میں   مُزدَلِفہ اور مِنیٰ کادیکھوں 

جھوم کر خوب کروں   خانۂ کعبہ کا طواف

پھر مدینے کو چلوں   گُنبدِ خَضْرا دیکھوں 

سبز گنبد کا حسیں   جلوہ دکھا دے یارب!

مسجِد نبوی کا پُر نور مَنارہ دیکھوں 

رَوضۂ پاک کے سائے میں   بلا کر آقا

آنکھ دے دیجئے میں   آپ کا جلوہ دیکھوں 

چوم لوں   کاش! نگاھوں   سے سُنَہری جالی

اشکبار آنکھ سے مِنبر کابھی جلوہ دیکھوں 

 

کاش! وہ آنکھ عطا ہو میں   مدینے آ کر

جس طرف جاؤں   اُدھر نور برستا دیکھوں 

جامِ عِشق ایسا پِلا دیجئے جانِ عالم

ہر گھڑی آہیں   بھروں   خود کو تڑپتا دیکھوں 

چشمِ تر سوزِ جگر دیجئے قلبِ مُضْطَر

عِشْق میں   روتا رہوں   جب بھی میں   روضہ دیکھوں 

سوزِشِ عشق میں   جلتا ہی رہوں   میں   ہر دم

آنکھ سے غم میں  ترے خون برستا دیکھوں 

اُس پہ رَشک آتا ہے اور پیاربَہُت آتا ہے

عشق میں   تیرے جسے روتا بِلکتا دیکھوں 

کاش! میں   رونے لگوں   قلب بھی ہو میرا اُداس

جب مدینے کی طرف قافِلہ جاتا دیکھوں   

 

زائرو! کہنا یہ رو رو کے شہا! اِک مسکین

کہہ رہا تھا یہ تڑپ کر:’’میں   مدینہ دیکھوں  ‘‘

 



Total Pages: 406

Go To