Book Name:Wasail e Bakhshish

آپ کی نسبت اے نانائے حُسین

آپ کی نسبت اے نانائے حُسین                   ہے بڑی دولت اے نانائے حسین

دور کر فُرقت اے نانائے حسین                    اپنی دے قُربت اے نانائے حسین

مر کے بھی نکلے نہ میرے قلب سے                 آپ کی الفت اے نانائے حسین

گھر چھٹے یا سرکٹے پر گُم نہ ہو                          دین کی دولت اے نانائے حسین

ہوں   گناہوں   کا مریضِ دائمی                        دُور ہو شامت اے نانائے حسین

واسِطہ غوث و رضا کا دور ہو                           ہر بُری خصلت اے نانائے حسین

غم تمھارا چَین لینے ہی نہ دے                       دیدو یہ راحت اے نانائے حسین

اب مدینے میں   بُلا کر دور کر                         یہ غمِ فُرقت اے نانائے حسین

سبز گنبد کی بہاریں   دیکھ لوں                          آئے وہ ساعت اے نانائے حسین

موت سر پر آگئی کر دو عطا                           دِید کا شربت اے نانائے حسین

اپنے جلووں   سے عطا فرمائیے                        نَزْع میں   راحت اے نانائے حسین

دو بقیعِ پاک میں   دوگز زمیں                            تم پئے تُربت اے نانائے حسین

اَز طُفیلِ غوثِ اعظم دور ہو                         قبر کی وَحشت اے نانائے حسین

نارِ دوزخ سے بچا کر یانبی!                            دیجئے جنّت اے نانائے حسین

حضرتِ شَبِّیر و شَبَّر کے طُفیل                        ٹال دو آفت اے نانائے حسین

آل سے اصحاب سے قائم رہے                     تا ابد نسبت اے نانائے حسین

 

پیر و مرشِد پر مرے ماں   باپ پر                    ہو سدا رَحمت اے نانائے حسین

ہر طرف ’’نیکی کی دعوت‘‘ عام ہو                 نیک ہو امَّت اے نانائے حسین

سنّتوں   کی ہر طرف آئے بہار                       نیک ہو امَّت اے نانائے حسین

خوب مَدنی قافِلوں   کی دھوم ہو                    نیک ہو امَّت اے نانائے حسین

’’مَدنی اِنعامات‘‘ کی ہو ریل پیل                   نیک ہو امَّت اے نانائے حسین

نیکیوں   میں   دل لگے ہر دم، بنا                        عامِلِ سنّت اے نانائے حسین

میں   گناھوں   سے سدا بچتا رہوں                      کیجئے رَحمت اے نانائے حسین

جھوٹ سے بغض و حسد سے ہم بچیں                 کیجئے رَحمت اے نانائے حسین

بدگمانی، بدنگاہی سے بچیں                            کیجئے رَحمت اے نانائے حسین

دیجئے قفلِ مدینہ دیجئے                               کیجئے رَحمت اے نانائے حسین

دولتِ اِخلاص ہم کو دیجئے                          کیجئے رَحمت اے نانائے حسین

کیجئے حج کا شَرَف مجھ کو عطا                           کیجئے رَحمت اے نانائے حسین

 



Total Pages: 406

Go To