Book Name:Wasail e Bakhshish

گنبدِ خَضرا کے جلوے آنکھ میں               جائیں   بس شاہِ حرم چشمِ کرم

یانبی! ’’نیکی کی دعوت‘‘ کی تڑپ              ہو کسی صورت نہ کم چشمِ کرم

سارے دیوانوں   کو طیبہ لو بُلا!                 یا رسولِ  مُحترم!   چشمِ  کرم

موت آئے کاش! طیبہ میں   مجھے              ازپئے خاکِ حَرَم چشمِ کرم

دو بقیع آقا بقیع اب تو بقیع                       ہو کرم آقا! کرم چشمِ کرم

اب سِرہانے آئیے یامصطفٰے                   ٹوٹنے والا ہے دم چشمِ کرم

حَشر ہے نامہ گناہوں   سے ہے پُر              تم ہی اب رکھ لو بھرم چشمِ کرم

لکھ سکے عطّارؔ نعتیں   آپ کی

دیجئے! ایسا قلم چشمِ کرم

 

گو ذلیل وخوار ہوں   کر دو کرم

(اَلْحَمْدُ لِلّٰہ یہ کلام ۱۴۱۴ھ کی حاضری میں   ۲۹ ذوالحجّۃِ الحرام کو مسجد نبوی علٰی صاحِبِہا الصَّلٰوۃ وَالسَّلام  میں   بیٹھ کر قلم بند کیا)

گو ذلیل و خوار ہوں   کر دو کرم                         پر سگِ دربار ہوں   کر دو کرم

یارسولَ اللّٰہ!رحمت کی نظر                             حاضِرِ دربار ہوں   کر دو کرم

رَحمتوں   کی بھیک لینے کے لئے                         حاضِرِ دربار ہوں   کر دو کرم

دردِ عِصیاں   کی دوا کے واسِطے                           حاضِرِ دربار ہوں   کر دو کرم

اپنا غم دو چشمِ نَم دو دردِ دل                              حاضِرِ دربار ہوں   کر دو کرم

آہ! پلّے کچھ نہیں   حُسنِ عمل!                         مُفلس و نادار ہوں   کر دو کرم

جذبۂ حُسنِ عمل ہے اور نہ علم                         ناقِص و بیکار ہوں   کر دو کرم

عاصِیوں   میں   کوئی ہم پَلّہ نہ ہو!                       ہائے وہ بدکار ہوں   کر دو کرم

ہے ترقّی پر گناہوں   کا مَرَض                           آہ! وہ بیمار ہوں   کر دو کرم

تم گنہگاروں   کے ہو آقا شَفیع                          میں   بھی تو حق دار ہوں   کر دو کرم

دولتِ اَخلاق سے محروم ہوں                          ہائے! بدگُفتار ہوں   کر دو کرم

آنکھ دے کر مُدّعا پورا کرو                              طالبِ دیدار ہوں   کر دو کرم

دوست، دشمن ہوگئے یامصطَفٰے                        بیکس و ناچار ہوں   کر دو کرم

کر کے توبہ پھر گُنہ کرتا ہے جو

میں   وُہی عطارؔ ہوں   کر دو کرم

 

 



Total Pages: 406

Go To