Book Name:Wasail e Bakhshish

رکّھوں   نیچی نظر میں   ، اِدھریا اُدھر            کچھ نہ دیکھوں   کرم، تاجدارِحرم

اشکباری کروں  ، آہ و زاری کروں               ہو نگاہِ کرم، تاجدارِحرم

عشقِ خَلّاق([1]) دو، حُسنِ اَخلاق دو              ہو نگاہِ کرم، تاجدارِحرم

خوب مُخلِص بنوں  ، میں   رِیا سے بچوں            ہو نگاہِ کرم، تاجدارِحرم

آفتیں  جائیں  ٹل، مشکِلیں  بھی ہوں  حل    کردو ایسا کرم، تاجدارِحرم

ہوں   دُرُودوسلام آقا لب پر مُدام([2])          ہرگھڑی دم بدم، تاجدارِحرم

 

بدخَصائل([3])ٹلیں  ، سیدھے رستے چلیں        کردو آقا کرم، تاجدارِحرم

ہو گیا گر عذاب، اے رسالت مآب          سہہ سکیں   گے نہ ہم، تاجدارِحرم

خلد کی دو سَنَد، از طفیلِ صمد                     یاشفیعِ اُمَم، تاجدارِحرم

روزِ مَحشَر شہا! مجھ گنہگار کا                      آپ رکھنا بھرم، تاجدارِ حرم

ظاہِروباطِن ایک، آقا ہو کر دو نیک           یاشفیعِ اُمَم، تاجدارِحرم

اپنا دیوانہ کر، مست ومستانہ کر                شہریارِ اِرَم، تاجدارِحرم

اب مدینے بُلا، سبز گنبد دکھا                   چوموں   خاکِ حرم، تاجدارِحرم

صبروہمّت ملے، یوں   شہادت ملے             میرا سر ہو قَلَم([4])، تاجدارِحرم

کاش آئے وہ پَل، روتے روتے نِکل          جائے قدموں   میں   دم، تاجدارِحرم

کاش! ہوتا شہا، جِسم عطارؔ کا                    خاکِ طیبہ میں   ضَم([5])، تاجدارِحرم

 

ہو عطا اپنا غم ، تاجدارِ حرم

ہو عطا اپنا غم، تاجدارِحرم                دیجئے آنکھ نَم، تاجدارِحرم

 



[1]     بہت پیدا کرنے والا ۔

[2]     ہمیشہ ۔

[3]     بُری عادتیں ۔

[4]     کٹنا ۔

[5]      مِلانا ،ایک چیز کو دوسری چیز میں   شامل کردینا ۔



Total Pages: 406

Go To