Book Name:Wasail e Bakhshish

کرکے اَطوار ٹھیک، استِقامت کی بھیک     دیدو شاہِ حرم، تاجدارِحرم

سب خطائیں   مُعاف، اور نامہ([1])ہو صاف     پاؤں   باغِ اِرَم، تاجدارِحرم

   

 

پڑھ لے تحریر جو، اُس کی اصلاح ہو           دیدو ایسا قلم، تاجدارِحرم

آمِنہ کے پِسَر ، خیر سے ہوں   بَسَر              زِیست کے پیچ و خَم، تاجدارِحرم

میرے ماہِ مُبیں   جو ہیں   اَنْدَوہ گیں              ان کے ہوں   دُور غم، تاجدارِحرم

حاسِدوں   کے حسد، کی نہیں   کوئی حد          اب تو کر دو کرم، تاجدارِحرم

یانبی تَابکے([2])، ہائے کُفّار کے                  ہم سَہیں   گے ِستَم، تاجدارِحرم

از طفیلِ رضا، ختم ہوں   سرورا                 دشمنوں   کے سِتَم، تاجدارِحرم

اے مِرے تاجوَر، دُور ہوں   سارے شَر     ہو نگاہِ کرم، تاجدارِحرم

ہُوں   بڑا رُوسِیَہ، ہے گُنہ پر گُنہ                  ہو نگاہِ کرم، تاجدارِحرم

کھولو رَحمت کے پٹ، جائے ظُلمت پلٹ          ہو نگاہِ کرم، تاجدارِحرم

تیرے عطارؔ کا، ہے یہ ارماں   شہا

نِکلے طیبہ میں   دم، تاجدارِحرم

 

ہم پہ نَظرِ کرم تاجدارِ حرم

ہم پہ نَظرِ کرم، تاجدارِحرم                   نیک بن جائیں   ہم، تاجدارِحرم

دردِ عِصیاں   مِٹے، عادتِ بد چُھٹے               شاہِ عَرب و عَجَم، تاجدارِحرم

نفس و شیطان کا، آہ! غَلَبہ ہوا                  یانبی ہو کرم، تاجدارِحرم

یکساں  ہوں  مَدح وذَم مجھ کوکردوکرم         کچھ خوشی ہو نہ  غم، تاجدارِحرم

بدکلامی نہ ہو، یاوہ گوئی نہ ہو                   بولوں   میں   کم سے کم، تاجدارِحرم

 



[1]     نامۂ اعمال   ۔

[2]     کب تک۔



Total Pages: 406

Go To