Book Name:Wasail e Bakhshish

کاش! قابو میں   رہے یہ میرا نفسِ بدلگام

جو تڑپتے ہیں   مدینے کی جدائی میں   شہا!

ان غریبوں   کا بھی کردو یانبی کچھ انتِظام

 

اب تو دیدو تم مدینے میں   شہادت کا شَرَف

یانبی! کردو یہ پوری آرزوئے ناتمام

حشر کی گرمی بلا کی پیاس سے ہوں   نیم جاں 

ساقِیا! ﷲ کوثر کا چھلکتا ایک جام

یاالٰہی! فالتو باتوں   کی عادت دور ہو

کاش! لب پر کوئی بھی جاری نہ ہوبے جا کلام

ہر گھڑی شرم و حیا سے بس رہے نیچی نظر

پیکرِ شرم و حیا بن کر رہوں   آقا مُدام

اے خدائے مصطفٰے عطارؔ کو وہ آنکھ دے

ہو غمِ محبوب میں   آنسو بہانا جس کا کام

 

سر ہو چوکھٹ پہ خَم ، تا جد ارِ حرم

سر ہو چوکھٹ پہ خَم، تاجدارِحرم              یہ نِکل جائے دَم، تاجدارِحرم

یہ رہا میرا سَر، سینہ قلب و جگر                  رکھ  دو  آقا  قدم،  تاجدارِحرم

حاضِری کا سبب، ہو اے ماہِ عَرب!           آئیں   طیبہ میں   ہم، تاجدارِحرم

ہر برس حج کروں  ، گردِ کعبہ پھروں             یاشہِ محترم، تاجدارِحرم

دیدو خَستہ جگر، کردو شورِیدہ([1])سر             اپنا جانِ کرم، تاجدارِحرم

جو کہ بہتی رہے، درد کہتی رہے               دیدو وہ چشمِ نَم، تاجدارِحرم

آئیے خواب میں  ، قلبِ بے تاب میں       سَروَرِ محترم، تاجدارِحرم

 



[1]     دیوانہ ۔



Total Pages: 406

Go To