Book Name:Wasail e Bakhshish

خوش بخت بے شُمار مدینے میں   دَ فن ہیں 

ہو جائے ان میں   کاش! مِرا بھی کبھی شُمُول

پَرچار سنّتوں   کا جو کرتا ہے رات دن

ہردم ہو اس پہ رَحمتوں   کا یاخدا نُزُول

دیتا ہوں   تجھ کو واسِطہ یارب حُضور کا

ہر ہر خطا تو بخش دے کر ہر مُعاف بھول

غوث و رضا کا واسِطہ یاشافِعِ اُمَم

رکھنا نہ مجھ کو حَشر میں   رنجیدہ و مَلول

گر لمحہ بھر بھی حاضِری طیبہ کی ہو نصیب

حاصِل یِہی ہے زِیست کا محنت ہوئی وُصُول

سرکار! چار یار کے صدقے میں   ہو کرم

عطارؔ کو سدا کے لئے کر لو تم قَبول

 

آپ آقاؤں   کے آقا آپ ہیں   شاہِ انام

(حَرَمینِ طیِّبَین زادَھُمَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً کی حاضری ۱۴۱۵ھ میں   یہ کلام تحریر کرنے کی سعا دت نصیب ہو ئی )

آپ آقاؤں   کے آقا آپ ہیں   شاہِ اَنام

یارسولَ اللّٰہ میں   ہوں   آپ کا ادنیٰ غلام

بات کی ہمّت نہیں   پڑتی ادب کا ہے مقام

دل اجازت ہی نہیں   دیتا کروں   کیسے کلام

سوزِ سرکار اے خدائے پاک تو کر دے عطا

عشقِ سرور میں   تڑپتا ہی رہوں   مولیٰ مُدام

یاالٰہی! مجھ کو دیوانہ مدینے کا بنا

کاش! ہو ذکرِ مدینہ میرے لب پر صبح و شام

تلخیوں  میں   خوش رہوں  اور لذّتوں   سے بے نیاز

 



Total Pages: 406

Go To