Book Name:Wasail e Bakhshish

رَحمتِ عالم سرہانے مسکراتے آئیے

جاں  بَلَب ہوں  آگیااب وقتِ رِحلت یارسول

آپکے قدموں   میں   گر جاؤں   گا فرطِ شوق سے

قبر میں   ہوگی مجھے جس دم زیارت   یارسول

نارِ دوزخ میں   گِرا ہی چاہتا تھا میں   نثار

اپنی رحمت سے عطا فرمائی جنّت   یارسول

یاشہِ اَبرار! دے دو خُلد میں   اپنا جَوار([1])

ازپئے غوثُ الورٰی ہو چشمِ رَحمت  یارسول

نیکیاں   بالکل نہیں   ہیں   نامۂ اعمال میں   

کیجئے عطارؔ کی آکر  شَفاعت  یارسول

 

پھر سے بلاؤ جلد مدینے میں   یارسول

پھر سے بلاؤ جلد مدینے میں   یارسول

کردو کرم حضور! پئے فاطِمہ بَتول

دُنیا پرست زَر پہ مرے گل پہ عَندَلیب

اپنا تو اِنتخاب مدینے کا ہے بَبُول

بیمارِ ہجر کا ابھی ہو جائے گا علاج

جاؤ اُٹھا کے لاؤ مدینے کی تھوڑی دھول

دنیا کی لذّتوں   سے مری جان چھوٹ جائے

مجھ کو بنا دے یاخدا تو عاشِقِ رسول

میری زَبان تر رہے ذِکر و دُرُود سے

بے جا ہنسوں  کبھی نہ کروں   گفتگو فُضُول

میری پسند خارِ مدینہ ہے بُلبلو

لیکر میں   کیا کروں   گا تمہارے یہاں   کے پھول

 

 



[1]     پڑوس۔



Total Pages: 406

Go To