Book Name:Wasail e Bakhshish

مال کا طالب نہیں   دے دو فَقَط سوزِ بلال

ہو عطا اپنے گدا کو یہ خزینہ الوداع

 

اپنی الفت کی شراب ایسی پلا آئے نہ ہوش

مجھ کو ہرگز اے شہنشاہِ مدینہ الوداع

کاش! میں   جاؤں   جدھر دیکھوں   مدینے کی بہار

ہو عطا آقا مجھے وہ چشمِ بِینا الوداع

گو بُرا ہوں  ، بے عمل ہوں   پر نہیں   ہوں   بے ادب

آپ کا ہوں  ، آپ کا، گو ہوں   کمینہ، الوداع

اَلفِراقُ آہ ا لفِراق اے پیارے آقا اَلفِراق

پھر بُلالو جلد آقائے مدینہ الوداع

یارسولَ اللّٰہ! اب لے لو سلامِ آخِری

چلنے والا ہے کراچی کو سفینہ الوداع

آہ! اب عطارؔ جاتا ہے مدینے سے وطن

ہائے مجبوری! سُکونِ قلب چھینا الوداع

 

پھر عطا کردیجئے حج کی سعادت یارسول

پھر عطا کر دیجئے حج کی سعادت یارسول                ہو مدینے کی اجازت بھی عنایت  یارسول

حج کا موسِم آگیا حُجّاج نے باندھی کمر                    میرے حج کی بھی کوئی ہوجائے صورت  یارسول

چل پڑے ہیں   قافِلوں   پر قافِلے سُوئے حجاز            میں  رہاجاتاہوں  ہائے!جانِ َرحمت  یارسول

یارسولَ اللّٰہ! صَدقہ فاطِمہ کے لال کا                    دیجئے مجھ کو مدینے کی اجازت  یارسول

سبز گنبد کی فَضاؤں   میں   بُلالو اب مجھے                  از پئے شاہِ امامِ اہلِ سنّت یارسول

گر مِری تقدیر میں   دُوری لکھی ہے یانبی                 ہر گھڑی مجھ کو رُلائے تیری فُرقَت  یارسول

صَدقہ صِدّیق و عُمر عُثمان و حَیدر کا حُضُور                 غم مدینے کا مجھے کر دو عِنایت یارسول

 



Total Pages: 406

Go To