Book Name:Wasail e Bakhshish

حسرتا واحسرتا شاہِ مدینہ  الوداع

حسرتا وا حسرتا شاہِ مدینہ الوداع

پھٹ رہا ہے آپ کے غم میں   یہ سینہ الوداع

خوب آتا تھا سُرور آقا مدینے میں   مجھے

چُھوٹتا ہے ہائے اب میٹھا مدینہ الوداع

تیری گلیوں   سے بچھڑ کر بھی ہے کوئی زندگی

دور رہ کر ہائے مرنا ہائے جینا الوداع

آنکھ روتی ہے تڑپتا ہے دلِ غمگین اب

لُٹ رہا ہے ہائے قُربت کا خزینہ الوداع

دل مِرا غم ناک فُرقت سے کلیجا چاک چاک

پھٹ رہا ہے تیرے غم میں   ہائے! سینہ الوداع

میں   شِکستہ دل لئے بوجھل قدم رکھتا ہوا

چل پڑا ہوں   یاشَہَنْشاہِ مدینہ الوداع

 

خون روتا ہے دلِ مغموم ہِجرِ شاہ میں 

چاک ہے میرا کلیجا چاک سینہ الوداع

قافِلہ چلنے کو ہے سب رو رہے ہیں   زار زار

ٹوٹتا ہے ہائے! دل کا آبگینہ الوداع

جانے کب پھر آئے گا میٹھا مدینہ دیکھنے

کب سفر پائے گا بدکار و کمینہ الوداع

نام سنتے ہی مدینے کا میں   آقا روپڑوں 

کاش! آجائے مجھے ایسا قرینہ الوداع

آپ کی یادوں   کے صدقے وہ ملے سنجیدگی

میں   نہ پھر بے جا ہنسوں   شاہِ مدینہ الوداع

 



Total Pages: 406

Go To