Book Name:Wasail e Bakhshish

عَرَفات اور مُزْدَلِفہ اور منٰی چلوں                  حج کرلوں   حق سے اِذْن دلا دیجئے حُضُور

خُلَفائے راشِدین کے صدقے میں   یانبی          خوابوں   میں   اپنا جلوہ دکھا دیجئے حُضُور

سائل غمِ مدینہ کا ہوں   شاہِ بحروبر                مجھ کو غمِ مدینہ شہا دیجئے حُضُور

احمدرضا کا واسِطہ الفت کا ساقیا                   مجھ کو چھلکتا جام پِلا دیجئے حُضُور

ہروقت سوزِ عشق میں   تڑپا کروں   شہا            آگ ایسی میرے دِل میں   لگا دیجئے حُضُور

زَہرا کے لاڈلوں   کا وسیلہ میں   لایا ہوں              پَژمردہ دل کو میرے کھِلا دیجئے حُضُور

 

صَدْقہ شہیدِ کربلا کا شاہِ انبِیا                      دیوانۂ مدینہ بنا دیجئے حُضُور

یامصطَفٰے میں   الفتِ دنیا میں   پھنس گیا             اِس قید سے خُدارا چُھڑا دیجئے حُضُور

پُرخار وادیوں   میں   بھٹک کے میں   رہ گیا          بُھولے ہوئے کو راہ دکھا دیجئے حُضُور

توبہ نِباہ میں   نہیں   پاتا ہوں   یانبی!                 اب استِقامت آپ شہا دیجئے حُضُور

ڈر لگ رہا ہے آہ!جہنّم کی آگ سے              بخشِش کا مجھ کو مُژدہ سنا دیجئے حُضُور

’’قفلِ مدینہ‘‘ دیجئے مُرشِد کا واسِطہ              خاموش رہنا مجھ کو سکھا دیجئے حُضُور

عطارِؔ بدخصال کا عصیاں   شِعار کا

دل مرُدہ ہوچکا ہے جِلا دیجئے حُضُور

 معززکون؟

حضرتِ موسٰیعَلَیْہِ السَّلَام نےبارگاہِ الٰہی میں عرض کی:اےرب عَزَّ  وَجَلَّ!تیرے نزدیک کون سابندہ زیادہ عزت والاہے؟ارشادفرمایا:وہ جوبدلہ لینےکی قدرت کےباوجودمعاف کردے۔(شعب الایمان للبیھقی، ج۶ص ۳۱۹، حدیث:۸۳۲۷)

 

یارسولَ اللّٰہ! تیرے چاہنے والوں   کی خیر

یارسولَ اللّٰہ تیرے چاہنے والوں   کی خیر

سب غلاموں   کا بھلا ہو سب کریں   طیبہ کی سیر

کاشکے ہجرِ مدینہ مجھ کو رکھے  بیقرار

چَین ہی آئے نہ مجھ کویادِطیبہ کے بِغیر

یانبی اب تو مدینے میں   مجھے بلوایئے

ہو مُیسَّر با ادب پھر آپ کی گلیوں   کی سَیر

کاش! طیبہ میں   شہادت کا عطا ہو جائے جام

 



Total Pages: 406

Go To