Book Name:Wasail e Bakhshish

پھر لپٹ جَاتا ہے آکر سبز گُنبد دیکھ کر

ٹُوٹ جائے دَم مدینے میں   مرا یارب! بقیع

کاش ہوجائے مُیَسَّر سبز گُنبد دیکھ کر

جَب جُدائی کی گھڑی آتی ہے تو کَوہِ اَلَم

ٹوٹ پڑتا ہے دِلوں   پر سبز گُنبد دیکھ کر

 

آپ کی گلیوں   کے کُتّے مُجھ سے تو اچھّے رہے

ہے سُکُوں   ان کو مُیَسَّرسبز گُنبد دیکھ کر

وقتِ رُخصت خُون اُگلتے تھے مرے قلب و جگر

آنکھ رَو پڑتی تھی اکثر سبز گُنبد دیکھ کر

میرے مُرشِدنے گزارے ہیں  مدینے میں  برس

اُن کی رحمت سے سَتَتَّر سبز گُنبد دیکھ کر

یارسُول اللّٰہ! مُرشدپر کرم ہوں   بے شمار

سَوئے ہیں   قدموں   میں   آکر سبز گُنبد دیکھ کر

آہ! اے عطّارؔ اتنا بھی نہ تُجھ سے ہوسکا!

جَان کر دیتا نچھاوَر سبز گُنبد دیکھ کر

 نابینا کو چالیس قدم چلانے کی فضیلت

حضرتِ سیِّدُنا اَنَس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ جو کسی نابینا کو چالیس قدم ہاتھ پکڑ کر چلائے گا اُس کے چِہرے کوجہنَّم کی آگ نہیں چُھوئے گی۔  (تاریخ مدینۃ دمشق لابن عساکِر ج ۴۸ص۳)

 

سویا ہوا نصیب جگا دیجئے حُضُور

سویا ہوا نصیب جگا دیجئے حُضُور                   میٹھا مدینہ مجھ کو دکھا دیجئے حُضُور

اب ’’چل مدینہ‘‘ کا مجھے مُژدہ سنائیے            روتے ہوئے کو اب تو ہنسا دیجئے حُضُور

پھر سبز گنبد اور وہ مینار کی بہار                   غوث و رضا کا صدقہ دکھادیجئے حُضُور

مِسکین ہوں  ، غریب ہوں   پلّے نہیں   ہے کچھ           خرچہ سفر کا دیجئے نا دیجئے حُضُور

 



Total Pages: 406

Go To