Book Name:Wasail e Bakhshish

میری آمد ہو طیبہ میں    اے کاش یوں          چاک سینہ ہو دامن بھی ہو تارتار

بھائیو، بہنو اپناؤ تم سُنّتیں                     خوش ہو رب تم سے راضی شہِ نامدار

موت بدکار کو آئے طیبہ میں   پھر            ہو بقیعِ مبارَک میں   اِس کا مزار

یاخدا بے سبب بخش عطّارؔ کو

اِس کو جنّت میں   دیدے نبی کا جَوار([1])

 

ہو گیا حاجِیوں   کا شُروع اب شُمار

ہو گیا حاجِیوں   کا شُروع اب شُمار                       اِذن مجھ کو بھی دے دو شہِ ذی وقار

تیری نظرِ کرم کا ہوں   اُمّیدوار                        گو مِرے جُرم سرکار ہیں   بے شمار

پھر مدینے کی جانب چلے قافلے                        ہو گئے عاشِقانِ نبی بے قرار

از پئے غوثِ اعظم نگاہِ کرم                           پھر دکھا دو مدینے کے لَیل و نَہار

میرے میٹھے مدینے کی کیا بات ہے                     ہے فَضا مہکی مہکی ہوا خوشگوار

جس قَدَر بھی ہیں   اسلامی بھائی بہن                     سب کو بُلواؤ محبوبِ پروردگار

عَرش پر فرش پر خُلد پر خَلق پر                        اذنِ رب سے ہے نافِذ ترا اقتِدار

کیجئے دُور دنیا کے رنج و اَلَم                              آپ پر میرے حالات ہیں   آشکار

میرے نزدیک آئے نہ پت جھڑ کبھی                  تاجدارِ مدینہ دو ایسی بہار

پھنس گئی ناؤ عِصیاں   کے طوفان میں                    اب لگا دو مِرے ناخدا جلد پار

میرے دامانِ تَر کی شفیعُ الورٰی                         لاج رکھنا خدارا بَروزِ شمار

سنّتوں   کا میں   چرچا کروں   رات دن                      ہو عطا ایسا جذبہ پئے چاریار

اے مدینے کے زائر درِ پاک پر                         عرض کرنا مِرا بھی سلام اشکبار

پیرومرشِد کے صدقے ہو ایسی عطا

آئے عطارؔ دربار میں   باربار

 

حسرت بھرے دلوں   سے ہم آئے ہیں   لوٹ کر

حسرت بھرے دلوں   سے ہم آئے ہیں   لوٹ کر

ہے چاک چاک ہجر میں   یہ سینہ و جگر

 



[1]     پڑوس۔



Total Pages: 406

Go To