Book Name:Wasail e Bakhshish

ہو کر م بد حال پر اے چشتیوں   کے تاجدار

یاامام احمدرضا! صدقہ ضیاءُالدین کا

ہو کرم کی اِک نظر اے سُنّیوں   کے تاجدار

مصطَفٰے والی ترے عطّارؔ ڈر کس بات کا

کار گر ہوگا نہ تجھ پر دشمنوں   کا کوئی وار

 

پھر مدینے کی گلیوں   میں   اے کردگار

پھر مدینے کی گلیوں   میں   اے کردگار      کاش پہنچوں   میں   روتا ہوا زار زار

کاش آ کر مدینے میں   پروانہ وار            سبز گنبد پہ ہو جاؤں   آقا نثار

مال و دولت کے انبار([1])بیشک نہ دو           بس مُقَّدر میں   لکھ دو مدینے کے خار

ساقیا جام ایسا پلادو مجھے                       بعدِ مُردَن([2])بھی اترے نہ جس کا خُمار

چومتا رہتا نَعلین، سرکار کے               کاش ہوتا میں   طیبہ کا گرد و غُبار

آگیا حج کا موسِم قریب آگیا                 مجھ پہ بھی ہو کرم میرے پروردگار

سندھ کے باغ آنکھوں   میں   جچتے نہیں        اب دکھا دو عَرَب کے حسیں   ریگزار

ہم سبھی ان کے دَربارِ دُربا([3])ر میں            جائیں   گے اِنْ شَآءَ اللہ  ضَرور ایکبار

از طفیلِ بِلال و اُوَیس و رضا                 دو دلِ بے قرار آنکھ دو اشکبار

مجھ کو آلامِ دُنیا سے آزاد کر                  میں   تِرے غم میں   روؤں   شہا زار زار

 

آپ کا نام سنتے ہی سرکار کاش                دل مچلنے لگے جان ہو بے قرار

میرا سینہ مدینہ بنا دیجئے                       قلب کی ہو مدینہ مدینہ پکار

گر پڑو اُن کے قدموں   میں   روتے ہوئے      عاصیوں   پر بھی ان کو تو آتا ہے پیار

اب تو آجایئے مجھ کو چُھڑوایئے             ہر طرف سے گناہوں   کا ہوں   میں   شکار

میرے آقا! سِرہانے چلے آئیے            جاں   بَلَب([4])کب تلک اب کرے انتِظار

 



[1]     ڈھیر   ۔

[2]     موت ۔

[3]     موتی برسانے والا   ۔

[4]     جومرنے کے قریب ہو    ۔



Total Pages: 406

Go To